The news is by your side.

Advertisement

میانمار: مسلح افواج کا دن تاریخ کا خونی دن، 114 شہری گولیوں سے بھون دیے گئے

نیپیداؤ: میانمار (سابق برما) میں مسلح افواج کا دن تاریخ کا خونی دن بن گیا، فوجی بغاوت کے خلاف احتجاج کرنے والوں پر فوج ٹوٹ پڑی۔

تفصیلات کے مطابق میانمار کی حکومت پر غیر قانونی طور پر قابض ہونے والی فوج نے ایک دن میں فائرنگ سے 114 افراد ہلاک کر دیے، فائرنگ سے درجنوں زخمی بھی ہوگئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق میانمار میں ہلاک ہونے والوں میں 13 سال کی ایک بچی بھی شامل ہے، مینجان شہر میں احتجاج کرنے والے ایک شخص نے ایک آدمی کو گردن میں گولی لگتے دیکھا، شان نامی شمال مشرقی ریاست میں سیکیورٹی فورسز نے یونی ورسٹی طلبہ پر فائرنگ کر کے 3 طلبہ مار دیے، باگان نامی سیاحتی شہر میں ایک ٹور گائیڈ کو گولی مار کر ہلاک کیا گیا۔

گزشتہ روز مسلح افواج کے دن کے موقع پر فوجی بغاوت کے خلاف ملک کے کئی حصوں میں مظاہرے کیے گئے، میانمار میں امریکی سفارت خانے نے سویلینز کو قتل کرنے پر فوجی حکومت پر شدید تنقید کی، فیس بک پیج پر بیان میں کہا گیا کہ سیکیورٹی فورسز بچوں سمیت غیر مسلح سویلین کو قتل کر رہے ہیں، فوج ان لوگوں کو مار رہی ہے جن کے تحفظ کا حلف اس نے اٹھایا ہوا ہے۔

میانمار میں فوجی بغاوت: آنگ سان سوچی کی مشکلات میں مزید اضافہ

ملک میں مظاہرین پر بے رحمانہ تشدد جاری ہے، اقوام متحدہ نے بھی مظاہرین پر تشدد کی شدید مذمت کی ہے، اور سیکریٹری جنرل نے مظاہرین پر تشدد کو فوری روکنے کا مطالبہ کر دیا ہے۔

واضح رہے کہ یکم فروری سے فوجی بغاوت کے خلاف ہزاروں افراد سراپا احتجاج ہیں، مظاہرین ینگون، منڈالے، مینجان، باگان، شان اور دیگر علاقوں کی سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔ مجموعی طور پر یکم فروری سے اب تک فوجیوں نے فائرنگ میں 423 شہریوں کو قتل کیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں