The news is by your side.

Advertisement

یونان، غاروں میں چھپے پاکستانی سمیت 131 تارکین وطن گرفتار

یونان : جزیرے کریٹ کے غاروں میں چھپے 131 تارکین وطن اور انسانی اسمگلنگ میں ملوث میں بین الااقوامی گروہ کے 13 اراکین کو حراست میں لے لیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق یونانی اور برطانوی سیکیورٹی اداروں کی یہ مشترکہ کارروائی یونان کے جنوبی علاقے میں واقع جزیرے کریٹ میں کی گئی جو شمال میں مصر اور لیبیا سے جا ملتا ہے اور جہاں پاکستان، مصر اور شام سے تعلق رکھنے والے تارکین وطن غاروں میں چھپے بیٹھے تھے کہ گرفتار کرلیے گئے۔

یونانی حکام کے مطابق سیکیورٹی ادارے کی جانب سے انسانی اسمگلنگ میں ملوث گروہ کے خلاف چھاپہ مار کارروائیاں جاری ہیں جن میں ایک اہم کامیابی حاصل ہوئی ہے جس کے دوران نہ صرف یہ کہ 13 انسانی اسمگلر بلکہ 131 تارکینِ وطن کو بھی حراست میں لے لیا گیا ہے۔

یونانی حکام نے بتایا کہ انسانی اسمگلنگ میں ملوث بین الااقوامی گروہ کی بیخ کنی میں برطانیہ کے سیکیورٹی اداروں کا بھی تعاون حاصل رہا اور گرفتار 131 تارکین وطن میں پاکستانی سمیت مصر اور شام کے باشندے شامل ہیں۔

یونانی حکام کا کہنا ہے کہ اس جزیرے کے ذریعے تارکین وطن کو اچھے مستقبل کے خواب دیکھا کر یورپ سمیت دیگر ممالک میں بھیجے جانے کی اطلاعات تھیں تاہم شواہد ہاتھ نہیں آئے تھے تاہم اس بار مسلسل ریکنگ اور نگرانی کے بعد بین الاقوامی گروہ کو پکڑنے میں کامیابی حاصل ہوئی۔

واضح رہے کہ شام میں خانہ جنگی کے باعثٍ کئی شامی دیگر ملکوں کی جانب ہجرت کر رہے ہیں جس کے لیے غیر قانونی راستے اور ذرائع استعمال کیے جارہے ہیں اسی طرح پسماندہ ممالک سے اچھے مستقبل کی خاطر یورپ سمیت دیگر ملکوں کی جانب ہجرت کا عمل بھی تیزی سے جا رہی ہے۔

لہذا ملک میں خانی جنگی کا دور دورہ ہو یا غربت ڈیرے ڈال رکھے ہوں دونوں صورتوں میں انسانی اسمگلر مجبور اور غریب لوگوں کی مجبوری کا فائدہ اٹھا کر غیر قانونی طور پر انسانی اسمگلنگ کا باعث بنتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں