The news is by your side.

Advertisement

متنازعہ برطانوی مبصر کیٹی ہاپکنز کو آسٹریلیا سے نکلنے کا حکم

متنازعہ برطانوی مبصر کیٹی ہاپکنز کو کرونا کا مذاق اڑانا مہنگا پڑگیا۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق دائیں بازو کے رجحانات رکھنے والی متنازعہ برطانوی مبصر کیٹی ہاپکنز کو کو آسٹریلیا سے نکلنے کا حکم دیا گیا ہے،آسٹریلوی حکومت نے یہ سخت فیصلہ سڈنی کے ایک ہوٹل میں کرونا قوانین کی سنگین خلاف ورزی کرنے پر کیا۔

نسل پرستانہ رجحانات رکھنے والی ہاپکنز رئیلٹی ٹی وی شو بگ برادر آسٹریلیا میں اداکاری کے لیے گئی ہوئی ہیں، سیون نیٹ ورک اور پروڈکشن کمپنی اینڈیمول شائن آسٹریلیا نے کہا ہے کہ ہاپکنز کو ان تبصروں کی وجہ سے رئیلٹی شو سے برطرف کردیا گیا ہے۔

جمعہ کے روز سڈنی ہوٹل کے کمرے سے ایک ویڈیو پوسٹ میں کیٹی پاپکنز نے ہوٹل کے فرنٹ لائن عملے کو خطرہ میں ڈالنے کے بارے میں تبصرہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ کھانا پہنچانے والوں سے بغیر ماسک ہی کھانا وصول کریں گی، ساتھ ہی برطانوی مبصر نے ویڈیو پر آسٹریلیا حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

کیٹی پاپکنز نے کرونا لاک ڈاؤن کو “انسانی تاریخ کا سب سے بڑا فریب” بھی قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ آسٹریلیا کے دو سب سے بڑے شہر سڈنی اور میلبورن آجکل کرونا لاک ڈاؤن میں ہیں۔

آج آسٹریلیا حکومت نے تصدیق کی کہ ویزا منسوخ کردیا گیا ہے اور انہیں رئیلٹی شو سے بھی نکال دیا گیا ہے،

پیر کے روز آسٹریلیائی حکومت نے تصدیق کی کہ ان کا ہاپکنز کا ویزا منسوخ کردیا گیا ہے اور انہیں رئیلٹی شو سے بھی نکال دیا گیا ہے، آسٹریلیا کی وزیر داخلہ کیرن اینڈریوز نے ہاپکنز کی ویڈیو تبصرے کو آسٹریلیا کے عوام کے منہ پر طمانچہ قراردیتے ہوئے کہا کہ ہم انہیں جلد سے جلد ملک سے باہر نکالنے کی کوشش کررہے ہیں،انہوں نے مزید کہا کہ ذاتی طور پر میں بہت خوش ہوں کہ وہ یہاں سے چلی جائیں گی۔

ہاپکنز نے اپنی ملک بدری کے بارے میں کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے لیکن اتوار کے روز انہوں نے کہا تھا کہ انہوں نے اپنے قرنطینہ کے دوران مذاق کیا تھا،

یاد رہے کہ پچھلے سال ٹوئٹر نے نفرت انگیز ٹوئٹس کرنے پر پاپکنز پابندی عائد کردی تھی، سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پسندیدہ مبصر ہاپکنز نے گزشتہ سال تارکین وطن کو “لال بیگ” سے تشبیہ دی تھی، اس کے علاوہ ہاپکنز کو نسلی منافرت پھیلانے کے الزام میں دو ہزار اٹھارہ میں جنوبی افریقا میں بھی حراست میں لیا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں