The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس کی 2 ویکسینز کو امریکی ادارے کی جانب سے اعزاز مل گیا

واشنگٹن: کرونا وائرس کی 2 عدد ویکسینز کو امریکی ادارے ایف ڈی اے کی جانب سے فاسٹ ٹریک کا اسٹیٹس دے دیا گیا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق جرمنی بائیو ٹیک کمپنی BioNTech اور امریکی فارماسیوٹیکل فائزر (Pfizer) کو 2 تجرباتی کرونا وائرس ویکسینز کے لیے فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کی جانب سے فاسٹ ٹریک کا درجہ دیا گیا۔

یہ دو ویکسینز BNT162b1 اور BNT162b2 ان 4 جدید ترین ویکسینز میں سے ہیں جو مذکورہ دونوں کمپنیاں تیار کر رہی ہیں، فاسٹ ٹریک ایک ایسا پروسیس ہے جو خطرناک بیماریوں کے علاج اور روک تھام کے لیے نئی ادویہ اور ویکسینز کی تیاری کے عمل کو سہولت فراہم کرتا ہے اور ان کے جائزے کے عمل کو تیز تر کرتا ہے۔

مذکورہ ویکسینز کو یہ حیثیت پہلے اور دوسرے مرحلے کے تجربات کے ابتدائی ڈیٹا کی بنیاد پر دی گئی ہے، یہ تجربات اس وقت امریکا اور جرمنی میں جاری ہیں، ان کمپنیوں نے یکم جولائی کو ویکسین BNT162b1 کے لیے فیز 1 اور فیز 2 کا ڈیٹا جاری کیا تھا، خیال رہے کہ BNT162 پروگرام کے تحت فی الوقت 4 تجرباتی ویکسینز پر کام ہو رہا ہے، ان میں سے ہر ایک منفرد مرکب (mRNA) کی حامل ہے اور ان کا ٹارگٹ اینٹی جن بھی الگ ہے۔

فائزر کے ایک سینئر وائس پریذیڈنٹ پیٹر ہونِگ نے میڈیا کو بتایا کہ ایف ڈی اے کی جانب سے ان 2 ویکسینز کو فاسٹ ٹریک کی حیثیت دینے کے فیصلے کا مطلب ہے کہ SARS-CoV-2 کے خلاف ایک مؤثر اور محفوظ ویکسین کی تیاری کی کوششوں میں ایک اہم سنگ میل عبور کر لیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ BNT162 کیٹیگری کی ویکسینز کلینکل تجربات سے گزر رہی ہیں، دنیا میں اس کی تقسیم کی منظوری فی الحال نہیں دی گئی ہے، ریگولیٹری کی جانب سے منظوری کی شرط کے ساتھ کمپنیوں کو یہ توقع ہے کہ ان ویکسینز کے اگلے تجرباتی مرحلے کا آغاز رواں ماہ کے آخر میں ہو جائے گا۔ اگر جاری تجربات کامیاب رہے اور ویکسین کو ریگولیٹری منظوری مل گئی تو اندازے کے مطابق یہ کمپنیاں 2020 کے اختتام تک 10 کروڑ ڈوز جب کہ 2021 کے اختتام تک 1 ارب 20 کروڑ ڈوز تیار کر لیں گی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں