The news is by your side.

Advertisement

چالیس سال قبل مردہ قرار دی گئی خاتون دوبارہ زندہ

کانپور : جیسے اللہ رکھے اُسے کون چکھے، بھارت میں 40 سال پہلے مردہ قرار دی جانے والی خاتون دوبارہ زندہ ہوگئی۔

بھارت کے شہر کانپور میں ایسا ہی ایک واقعہ پیش آیا، بھارت کے گاؤں کی رہائشی خاتون چالیس سال قبل موسم ِ گرما کے آغاز میں جب اپنے جانوروں کی خوراک کا بندوبست کرنے کے لیے کھیتوں میں گئی تو اسے وہاں کوبرا سانپ نے کاٹ لیا۔

ولاسا کے گھر پہنچتے ہی گھر والوں نے اس کا علاج شروع کردیا لیکن اتنی دیر میں سانپ کا زہر پھیل گیا اور 82 سالہ ولاسا بے ہوش گئی، گھر والوں نے اسے مردہ سمجھ کر دریائے گنگا میں بہادیا۔

ایک گاؤں کے ماہی گیروں نے جب دریا میں لاش بہتی دیکھی تو انہوں نے اسے باہر نکال لیا تو پتہ چلا عورت مردہ نہیں بلکہ زندہ عورت ہے، ماہی گیر خاتون کو مندر لے گئے اور علاج شروع کردیا۔

ولاسا کی صحت تو بحال ہوگئی لیکن وہ اپنی یادداشت کھو بیٹھی تھی جس کے باعث ولاسا کو مندر میں رہنا پڑا لیکن 40 سال بعد تھوڑی بہت یادداشت واپس آنا شروع ہوئی تو اس نے واپس اپنے گاؤں جانے کا فیصلہ کیا۔

ولاسا جب اپنے گاؤں پہنچی تو گھر والے اسے دیکھ کر سکتے کے عالم میں آگئے، ولاسا نے اسے مردہ سمجھ کر دریا میں پھینکنے پر گھر والوں کو خوب سنائی لیکن بعد میں سب نے اس کے زندہ بچ جانے پر خوشی کا اظہار کیا۔


مزید پڑھیں : مردہ قرار دی جانے والی خاتون دوبارہ زندہ


خیال رہے کہ عام طور پر ہندو مذہب کے پیروکار اپنے پیاروں کو جلانے کے بعد ان کی راکھ گنگا دریا میں بہا دیتے ہیں لیکن انہی پیروکاروں میں چند ایسے بھی ہیں، جن کا ماننا ہے کہ اگر کسی سانپ کاٹ لے اور اس کی لاش بغیر جلائے گنگا میں بہا دی جائے تو دریا اس کے جسم سے زہر نکال دیتا ہے اور زندگی لوٹ آتی ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں