The news is by your side.

Advertisement

پینٹاگون نے 22 دن بعد ایرانی حملے میں زخمی امریکی فوجیوں کی اصل تعداد بتا دی

واشنگٹن: امریکا نے آخر کار اقرار کر لیا ہے کہ 8 جنوری کو بغداد میں فوجی اڈوں پر ہونے والے ایرانی حملوں میں اس کے فوجی زخمی ہوئے تھے۔

تفصیلات کے مطابق پینٹاگون نے اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ 8 جنوری کو عراق میں فوجی اڈوں کو نشانہ بنایا گیا تھا، ایران کے ان میزائل حملوں میں 50 امریکی فوجی زخمی ہوئے تھے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق پینٹاگون نے کہا کہ ایرانی حملے میں زخمی ہونے والے امریکی فوجیوں کا علاج عراق، کویت، اور جرمنی میں ہوا تھا، حملے میں زیادہ تر فوجیوں کو سر میں چوٹ لگی تھی، متعدد امریکی فوجی علاج کے بعد ڈیوٹی پر واپس آ چکے ہیں۔

یاد رہے کہ ایران نے امریکا کے خلاف کارروائی جنرل سلیمانی کی موت کے رد عمل میں کی تھی، امریکی صدر ٹرمپ نے حملوں میں کسی فوجی کی ہلاکت یا زخمی ہونے کی تردید کی تھی، تاہم 17 جنوری کو امریکی فوجی حکام نے اعتراف کیا تھا کہ ایرانی حملے میں 11 امریکی فوجی زخمی ہوئے جنھیں کویت اور جرمنی کے اسپتالوں میں منتقل کیا گیا۔ دوسری طرف ایرانی حکام نے دعویٰ کیا تھا کہ امریکی فوجی اڈوں پر میزائل حملوں میں 80 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

ایران نے امریکا پر جوابی وار کر دیا، فوجی اڈوں پر دو بڑے حملوں میں 80 ہلاک

فوجی اڈے عین الاسد کے امریکی اہل کاروں نے حملے کے بعد بتایا تھا کہ وہ حملے کے وقت پانچ گھنٹوں تک بنکروں میں چھپے رہے، اور ان خوف ناک حملوں میں ان کا محفوظ رہنا کسی معجزے سے کم نہیں تھا، امریکی فضائیہ کی افسر لیفٹیننٹ کرنل اسٹیکی کولیمین نے حملہ حیران کن قرار دیا اور کہا کہ حملے سے چند گھنٹے قبل ہی نوٹی فکیشن موصول ہوا تھا کہ بیس پر حملے کا خدشہ ہے اور تین گھنٹے بعد بم باری شروع ہو گئی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں