The news is by your side.

Advertisement

اسکول کے باہر سے لاپتہ ہونے والی 6 سالہ بچی زیادتی کے بعد قتل

لکھنؤ: بھارتی ریاست اترپردیش میں دو سفاک نوجوانوں نے 6 سالہ بچی کو زیادتی کے بعد قتل کردیا، مقتولہ کا تعلق ہندو کی نچلی ذات دلت سے تھا۔

بھارتی میڈیا رپورٹ کے مطابق 18 اور 19 سال کے سفاک نوجوانوں نے 6 سالہ دلت لڑکی کو جمعرات کے روز پریاگرج کے علاقے سے اغوا کیا اور اُسے زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد قتل کردیا۔

پولیس حکام کے مطابق بچی کو اسکول کے باہر سے دوپہر دو بجے اُس وقت اغوا کیا گیا جب وہ اپنی دوست کے ساتھ واپس گھر آرہی تھی۔

ایس ایس پی ستھیارتھ انیریدھا پنکج کا کہنا تھا کہ ملزمان نے بچی کو قتل کر کے اُس کی لاش جنگل میں پھینک دی تھی جو جمعے کے روز برآمد ہوئی۔

پولیس نے والد کی شکایت پر دو ملزمان کو گرفتار کیا جنہوں نے دورانِ تفتیش اپنے گھناؤنے جرم کا اعتراف کیا۔ایس ایس پی کے مطابق واقعے کا مقدمہ درج کرلیا گیا البتہ ابھی اُس میں زیادتی کی دفعات شامل نہیں کی گئیں۔

پولیس حکام کے مطابق پوسٹ مارٹم رپورٹ آنے کے بعد مقدمے میں دفعات شامل کی جائیں گی البتہ ایف آئی آر میں قتل کی دفعہ شامل کی گئی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق پولیس کا کہنا تھا کہ گرفتار ہونے والے دو افراد میں سے ایک ذہنی معذور (پاگل) ہے، البتہ ابھی مقدمے کی تحقیقات جاری ہیں اور اگر ڈی این اے میچ کرگیا تو کسی کو نہیں چھوڑا جائے گا۔

پولیس کے مطابق زیادتی کا نشانہ بننے والی طالبہ کی دوست نے بتایا کہ ملزمان نے اسکول کے باہر آکر اپنی موٹر سائیکل روکی تو اُس کی دوست جاکر بیٹھ گئی اور پھر وہ اُسے اپنے ساتھ درمیان میں بیٹھا کر لے گئے۔

ملزم نے دوران تفتیش یہ بھی اعتراف کیا کہ انہوں نے بچی کے گلے پر چھری پھیر کر قتل کیا کیونکہ وہ انہیں پہچان گئی تھی۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں