تازہ ترین

فیض آباد دھرنا : انکوائری کمیشن نے فیض حمید کو کلین چٹ دے دی

پشاور : فیض آباد دھرنا انکوائری کمیشن کی رپورٹ...

حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کردیا

حکومت کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی نئی قیمتوں...

سعودی وزیر خارجہ کی قیادت میں اعلیٰ سطح کا وفد پاکستان پہنچ گیا

اسلام آباد: سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان...

حکومت کل سے پٹرول مزید کتنا مہنگا کرنے جارہی ہے؟ عوام کے لئے بڑی خبر

راولپنڈی : پیٹرول کی قیمت میں اضافے کا امکان...

نئے قرض کیلئے مذاکرات، آئی ایم ایف نے پاکستان کے لیے خطرے کی گھنٹی بجادی

واشنگٹن : آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹیلینا...

اپنے استعمال کی یہ 8 چیزیں کبھی کسی کو نہ دیں

ہماری صحت کے حوالے سے کچھ چیزیں ایسی ہیں جنہیں اگر دوسرے لوگوں کو استعمال کیلئے دی جائیں تو ہم بہت بڑا خطرہ مول لے لیتے ہیں۔

شراکت داری یا شیئرنگ کرنا ایک معاشرتی معمول ہے اور ہم اپنی بہت سی چیزوں میں دوسروں کو شریک کرتے یا حصہ دار بناتے ہیں یہ ایک اچھا عمل ضرور ہے لیکن اس سے احتیاط بھی بہت ضروری ہے۔

ایک بات یاد رکھیں کہ صحت کے حوالے سے کچھ چیزیں ایسی ہوتی ہیں جن میں اگر آپ دوسروں کو شریک کریں گے یا آپ خود دوسروں کے استعمال میں آنے والی چیزیں استعمال کریں گے تو یہ نقصان دہ ہوگا۔ آج ہم آپ کو کچھ ایسی ہی اشیاء کے بارے میں آگاہ کررہے ہیں۔

شاپنگ ٹرالیاں

ذرا تصور کریں کہ آپ نے شاپنگ کی ٹرالی میں جہاں سبزیاں رکھی ہیں، کچھ دیر پہلے ٹھیک اسی جگہ ایک چھوٹا بچہ بیٹھا تھا جس کا پمپر بھی گیلا اور آلودہ ہوچکا تھا تو یہ جاننے کے بعد آپ کا رد عمل کیا ہوگیا؟ اور یہ بھی تو ہوسکتا ہے کہ شاپنگ کے لیے آئی ہوئی خاتون ٹرالی پر اس جگہ اپنے منے کو بیٹھنے کے لئے کہہ رہی ہوں جہاں تھوڑی دیر قبل کچی چکن یا مٹن کے غیر محفوظ پیکٹ رکھے ہوں۔

امریکی گروسری اسٹورز میں رکھی ٹرالیوں کے معائنے میں دیکھا جاچکا ہے کہ یہ جراثیم کی آماجگاہ ہوتی ہیں۔ 80 فیصد ٹرالیوں میں ای کولائی جراثیم موجود تھے جو انسانی فضلے میں ہوتے ہیں اور آلودہ ہاتھوں سے ایک سے دوسرے میں منتقل ہوتے ہیں۔

ٹرالیوں پر ایسے جراثیم اور وائرسز بھی دیکھے گئے جو نزلہ، زکام، قے اور دست کا سبب بنتے ہیں۔ ان سے بچنے کے لیے بہتر ہوگا کہ شاپنگ ٹرالی استعمال سے پہلے اس کے ہینڈل اور بچے کی سیٹ کو جراثیم کش کپڑے سے صاف کرلیں اور شاپنگ سے پہلے اور بعد میں اپنے ہاتھوں کو بھی جراثیم کش محلول سے صاف کریں۔

اے ٹی ایم اور ٹچ اسکرین

آپ کو بینک سے رقم نکالنی ہو یا کچھ چیزیں خریدنے کسی اسٹور میں جائیں یا کہیں اور رقم کی ادائیگی کرنا چاہیں، اے ٹی ایم کی سہولت ہر جگہ موجود ہے لیکن خبردار رہیں کہ اے ٹی ایم کے ٹچ اسکرین اور کی پیڈز جراثیم سے اتنے آلودہ ہوتے ہیں کہ آپ ان کا تصور بھی نہیں کرسکتے۔

ٹوتھ برش

فرض کیجئے آپ اپنے کسی دوست کے گھر رات گزاررہے ہیں اور وہاں اپنا ٹوتھ برش لے جانا بھول گئے ہیں۔ باتھ روم میں آپ کے دوست کا ٹوتھ برش موجود ہے اور آپ کا جی چاہتا ہے کہ وقتی طور پر اس کو استعمال کرلیا جائے لیکن آپ کا یہ عمل بہت خطرناک ہوسکتا ہے۔

یاد رہے کہ جب آپ برش کرتے ہیں تو اس کے ریشے مسوڑھوں سے رگڑ کھاتے ہیں اور اس بات کا امکان ہوتا ہے کہ خون میں پلنے والے مہلک جراثیم اور وائرسز مثلاً ہیپاٹائٹس بی اور سی اور ایڈز کا مخصوص وائرس ایچ آئی وی بھی ٹوتھ برش کے راستے ایک سے دوسرے میں منتقل ہوجائے۔ ٹوتھ برش کی شیئرنگ سے سانس کی بیماریاں اور نزلہ زکام بھی دوسروں کو لگ سکتا ہے۔

کنگھی، ہیئر برش

دوسروں کی کنگھی یا ہیئر برش استعمال کرنا بھی خطرے سے خالی نہیں ہے۔ یاد رکھیں کہ جراثیم آپ کی کھال کے ہر حصے پر ہوتے ہیں، خواہ وہ سر کی کھال کیوں نہ ہو۔ جب ہم بالوں میں کنکھی یا برش کرتے ہیں تو اس کے ساتھ جراثیم بھی چپک جاتے ہیں اور یہ بھی آپ کو معلوم ہونا چاہئے کہ برش یا کنکھی کے دندانے کھال سے رگڑ کھاتے ہیں۔

اگر آپ دوسروں کے زیر استعمال کنگھی اپنے سرپر آزمائیں گے تو ایسی صورت میں جراثیم آپ تک منتقل ہوسکتے ہیں، ریسرچ میں کنگھی اور ہیئر برش پر بھی اور دیگر جراثیم دیکھے گئے ہیں۔

اس کے علاوہ ہیئر ڈیریسرز کے سیلون میں جو برش اور کنگھے استعمال ہوتے ہیں، ان کے بارے میں یہ یقین حاصل کرنا ضروری ہے کہ کیا انہیں روزانہ جراثیم سے پاک کیا جاتا ہے تاکہ جراثیم کی منتقلی کا امکان کم سے کم ہو۔

قلم یا پین

اکثر یہ صورتحال آپ کو بھی پیش آتی ہوگی کہ دفتر میں کام کرتے ہوئے آپ اپنے کسی ساتھی کے پاس گئے اور وہاں آپ کو کچھ لکھنے کی ضرورت پیش آئی۔ اگر آپ اپنا قلم اپنی میز پر چھوڑ آئے ہیں تو بلاتکلف اس دوست سے اس کا قلم طلب کریں گے اور وہ اپنی دراز کھول کریا جیب سے قلم نکال کر آپ کے حوالے کردے گا۔

لیکن ذرا ٹھہریں! نجی استعمال والے قلم جراثیم سے بھرے ہوتے ہیں کیونکہ اکثر لوگوں کو قلم منہ میں رکھنے یا ہونٹوں کے درمیان گھمانے کی عادت ہوتی ہے۔ اس طرح سانس کی بیماریوں میں مبتلا کرنے والے وائرس اور منہ کے انفیکشن بھی آپ تک منتقل ہوسکتے ہیں۔

یہ دیکھا گیا ہے کہ ٹین ایجرز کے قلم پر سب سے زیادہ جراثیم ہوتے ہیں، بہتر تو یہ ہے کہ ہمہ وقت آپ اپنا قلم ساتھ رکھیں اور اگر بحالت مجبوری دوسروں کا قلم استعمال کرنا ہی پڑے تو پہلے جراثیم کش وائپ سے اسے صاف کرلیں۔

موبائل فون

اگر آپ کے سیل فون کی بیڑی ختم ہوچکی ہے تو اپنے کسی دوست کے موبائل فون کو استعمال کرنا عقل مندی نہیں ہے اس لئے کہ سیل فون بھی جراثیم سے آلودہ ہوتے ہیں اور لوگ شاذ و نادر ہی انہیں صاف کرتے ہیں۔

سیل فون پر انفلوئنزا کے وائرس اور دیگر خطرناک جراثیم دیکھے گئے ہیں اور ریسرچ میں یہ بھی سامنے آچکا ہے کہ خواتین کے موبائل فون مردوں سے زیادہ گندے ہوتے ہیں۔ اس کی وجہ بظاہر یہ سمجھ میں آتی ہے کہ ان کے میک اپ کی اشیاء میں بھی جراثیم ہوتے ہیں اور یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ خواتین مردوں سے زیادہ نزلہ زکام میں مبتلا ہوتی ہے۔

شماریاتی حساب سے خواتین سالانہ تین بار نزلہ زکام کا شکار ہوسکتی ہیں جبکہ مرد ایک سال میں 1.5 مرتبہ زکام میں مبتلا ہوتے ہیں۔ مجبوری میں کسی دوسرے کا سیل فون استعمال کرنا ہوتو پہلے اسے جراثیم کش پونچھے سے صاف کریں اور استعمال کے بعد اپنے ہاتھ اچھی طرح دھولیں۔

شیونگ ریزر

شیونگ ریزر(بلیڈ) کے بارے میں تو تقریباً سبھی جانتے ہیں کہ دوسروں کے ریزر کبھی استعمال نہیں کرنے چاہئیں اس لئے کہ شیونگ کے دوران خراش لگتی رہتی ہے، خواہ وہ آپ کو نظر آئیں یا نہ آئیں۔

اس طرح کسی کے ریزر پر موجود خون آپ کے جسم میں اس وقت منتقل ہوسکتا ہے جب آپ اس کے استعمال شدہ ریزر سے شیو کریں اور اس شیو کے دوران کسی بھی وقت آپ کو بھی خراش لگ جائے لہٰذا ہوشیار رہیں۔ خون میں شامل ہونے والی بیماریاں بہت خطرناک ہوسکتی ہیں۔ کسی کے خون میں ہیپاٹائٹس بی کے وائرس زندگی بھر ہوسکتے ہیں اور وہ اس سے لاعلم رہ سکتا ہے۔

ٹی وی ریموٹ

اگر آپ کسی ہوٹل میں قیام پذیر ہیں یا کسی دوست یا پڑوسی کے مکان میں ٹی وی دیکھ رہے ہیں تو وہاں موجود ریموٹ کنٹرول کو استعمال سے پہلے اچھی طرح جراثیم کش محلول والے کپڑے سے صاف کرلیں کیونکہ ٹی وی ریموٹ کو شاید ہی کبھی صاف کیا جاتا ہے جس کی وجہ سے اس کے بٹن اور آس پاس لاکھوں کی تعداد میں جراثیم جمع ہوتے ہیں۔

گھروں میں استعمال ہونے والے ٹی وی ریموٹ بھی گندے ہوتے ہیں لیکن ہوٹل کے کمروں میں رکھے ٹی وی تو بہت ہی زیادہ آلودہ دیکھے گئے ہیں کیوں کہ وہاں لوگ باتھ روم استعمال کرنے کے بعد ہاتھ صابن سے دھونے کی زحمت بھی نہیں کرتے۔ ہوٹلوں کے علاوہ اسپتالوں اور نرسنگ ہومرز کے ٹی وی ریموٹ بھی جراثیم سے بھرے ہوتے ہیں۔

Comments

- Advertisement -