اتوار, مئی 26, 2024
اشتہار

98 سالہ خاتون نے کئی مِیل پیدل سفر کر کے بچھڑا خاندان پا لیا

اشتہار

حیرت انگیز

98 سالہ بزرگ خاتون نے اپنے بچھڑے خاندان سے ملنے کے لیے کئی میل پیدل سفر کیا اور اپنی مراد کو بالآخر پا لیا۔

یہ باہمت خاتون یوکرین سے تعلق رکھتی ہیں جنہوں نے سن رسیدگی کو پس پشت ڈال کر اپنے بچھڑے خاندان سے ملنے کے لیے چپل پہن کر اور چھڑی کے ساتھ تنہا 10 کلومیٹر طویل سفر پیدل طے کیا۔

امریکی خبر رساں ایجنسی اے پی کے مطابق مذکورہ خاتون لیڈیا اسٹیپینونا لومیکووسکا ہیں جو مشرقی ڈونیسٹک کے علاقے میں فرنٹ لائن پر واقع گاؤں اوچیریٹائن کی رہائشی تھی اور وہاں روسی فوج کے داخل ہونے کے بعد خاندان کے ہمراہ علاقہ چھوڑ کر نکلی تھیں۔

- Advertisement -

رپورٹ کے مطابق بوڑھی خاتون نے بتایا کہ روسی حملے کی صبح جب میں بیدار ہوئی تو چاروں طرف گولیاں بکھری پڑی تھیں اور بہت خوفناک منظر تھا۔

انہوں نے کہا کہ علاقہ چھوڑتئے وقت وہ اپنے بیٹے اور دو بہوؤں سے الگ ہو گئیں لیکن وہ ہاتھ میں چھڑی لیے سارا دن کچھ کھائے پیے بغیر چلتی رہیں تاکہ یوکرینی فوج کے زیر قبضہ علاقے تک پہنچ سکیں۔

اس دوران انہیں کافی مشقت پیش آئی اور وہ بتاتی ہیں کہ ایک بار میں توازن کھو بیٹھی اور گھاس میں جا گری اور کچھ دیر تک وہیں سوئی رہی۔ میں وہاں سے میں تھوڑا اور آگے گئی اور پھر دوسری بار گر پڑی، تاہم میں نے اُٹھ کر سوچا کہ مجھے آہستہ آہستہ اپنا سفر جاری رکھنا چاہیے۔

ڈونیٹسک کے علاقے میں یوکرین کی نیشنل پولیس کے قائم مقام ترجمان پاولو ڈیاچنکو کا کہنا تھا کہ ’لومیکووسکا کو اس وقت بچایا گیا جب یوکرینی فوجیوں نے انہیں شام کے وقت سڑک پر تنہا چلتے دیکھا۔

In this photo provided by the Ukrainian National Police of Donetsk region, 98-year-old Lidia Lomikovska is helped by a Ukrainian police officer after she escaped Russian-occupied territory in the Donetsk region, Ukraine, April 26, 2024. Lomikovska left the frontline town of Ocheretyne last week by walking almost 10 km (6 miles) alone, after Russian troops entered it and fighting intensified. (Ukrainian National Police of Donetsk region via AP)

انہوں نے خاتون کو ’وائٹ اینجلز‘ (پولیس کا ایک گروپ جو فرنٹ لائن پر رہنے والے شہریوں کو وہاں سے نکالتا ہے) کے حوالے کیا جو انہیں ایک پناہ گاہ میں لے گیا اور اُن کے اہل خانہ سے رابطہ کر کے ان سے ملوا دیا۔

Comments

اہم ترین

ویب ڈیسک
ویب ڈیسک
اے آر وائی نیوز کی ڈیجیٹل ڈیسک کی جانب سے شائع کی گئی خبریں

مزید خبریں