site
stats
حیرت انگیز

دبئی، ساحل سےغیرمعمولی حجم والا انڈہ برآمد

دبئی : ساحل سے ملنے والے غیر معمولی جسامت رکھنے والے انڈے نے سب کو محو حیرت میں مبتلا کردیا جب کہ انڈے پر کندہ پُراسراراور جادوئی کلمات سے سراسمیگی پھیل گئی۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کے ساحلوں پر مچھلی کا شکار کرنے والے مچھیرے سلیم معسودعلی کو مچھلیوں کے شکار کے لیے پھینکے گئے جال میں سے ایک بڑے سائزوالا  وزنی انڈہ برآمد ہوا جس پر پراسرار تحریریں کشیدہ تھیں۔

دبئی کی ساحل پر مچھلیوں کے شکار کو گئے مچھیرے سلیم معسود وزنی انڈے کو دیکھ کر حیران رہ گئے تاہم یہ حیرانگی اس وقت پریشانی میں تبدیل ہو گئی جب انڈے پر پُر اسرار اجنبی تحریریں کندہ ہوئی دیکھیں۔

مچھیرے نے بھاری اورغیرمعمولی سائز والے انڈے اور اس پر کندہ پُر اسرار تحریر سے متعلقہ ادارے کے اعلیٰ حکام کو آگاہ کیا جنہوں نے جادوئی کلمات کو پڑھنے کے لیے اسلامی افیئرز سینٹرسے رجوع کیا۔

رابطہ کرنے پر اسلامی افیئرز سینٹر نے انڈے پر تحریر جادوئی تحریر کو پڑھنے کے لیے ایک عالم کو مچھیرے کے پاس بھیجا جس نے انڈے پر کندہ تحریر کا مطالعہ کیا اور اسے پُر اسرار لیکن غیر اہم قرار دیا۔

غیر معمولی وزن اور سائز والے انڈے کو دیکھنے والے ایک عینی شاہد نے فوری طور پر ویڈیو بنا کر اسے سوشل میڈیا پر اپ لوڈ کردیا جو دیکھتے ہی دیکھتے وائرل ہو گئی ۔

ماہرِ وائلڈ لائف ڈاکٹر رضا خان کا کہنا تھا کہ ویڈیو دیکھنے سے پتہ چلتا ہے کہ یہ کسی شتر مرغ کا انڈہ ہے جس پر کسی نے نہ پڑھی جانے والی کچھ تحریریں کندہ کردی ہیں۔

گوشترمرغ افریقہ میں باکثرت پایا جاتا ہے تاہم متحدہ عرب امارات میں مختلف کمپنیوں نے کاروبار کے غرض سے شترمرغ کے کئی فارم ہاؤس بنا رکھے ہیں جب کہ مختلف افراد نے ذاتی حیثیت میں بھی شتر مرغ پال رکھے ہیں۔

ڈاکٹر رضا خان نے کہا کہ شتر مرغ کا انڈہ تقریباً ایک کلو تک وزنی ہوسکتا ہے لیکن ویڈیو میں دیکھا جانے والا انڈہ میرے پروفیشنل کیریئر میں اب تک کا سب سے بڑا اور وزنی انڈہ ہے۔

انڈے پر تحریر پُراسرار تحریر کے حوالے سے ڈاکٹر رضا کا کہنا تھا کہ اس قسم کی چیزوں کو نظرانداز کرنا چاہیے یہ غیراہم چیز ہے اور ہوسکتا ہے کہ کسی ضعیف العتقاد شخص نے کچھ جادوئی کلمات تحریر کر کے اسے سمندر میں پبھینک دیا ہو جو بعد ازاں مچھیرے کے جال میں پھنس گیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top