site
stats
صحت

چند ایسی عادات جو موت کا سبب بن سکتی ہے

آپ کو معلوم ہے کہ آپ کی چند عام عادات آپ کو موت کے منہ میں لے جا سکتی ہیں؟

طرز زندگی ہماری صحت اور شخصیت دونوں پر اثر انداز ہوتا ہے اور کچھ عادتیں ایسی ہوتی ہیں جو درحقیقت موت کی جانب لے جاتی ہیں۔

آسٹریلیا میں ہونے والی طبی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ کسی بھی فرد کی چھ عادات ایسی ہوتی ہیں، جو مختلف امراض کا باعث بن کر زندگی کا دورانیہ کم کرسکتی ہیں۔

اس تحقیق کے دوران 45 سال سے زائد عمر کے دو لاکھ 30 ہزار افراد کا جائزہ لیا گیا اور زندگی کے مخصوص پہلوؤں کا جائزہ لینے کے چھ عادات کا تعین کیا گیا ہے جو قبل از وقت موت کا باعث بن سکتی ہیں۔

ان عادات میں تمباکو نوشی ، غیر متوازن غذا کا استعمال، نو گھنٹے سے زیادہ یا چھ گھنٹے سے کم سونا ، سات گھنٹے سے زیادہ دیر تک بیٹھے رہنا، الکحل کا استعمال اور جسمانی ورزش سے بالکل دور رہنا شامل ہیں۔

تمباکو نوشی

تمباکو نوشی کے نقصانات سے متعلق سب ہی جانتے ہیں، یہ عادت مختلف قسم کے کینسر اور دیگر امراض کا سبب بن کر جلد زندگی کا خاتمے کا سبب بن سکتی ہے۔

smking

ورزش سے گریز

ورزش نہ کرنے سے انسان کا جسم لاغر ہوجاتا ہے اور صحت مند رہنے کیلئے ہفتے میں دو بار ورزش کرنا ضروری ہے جبکہ روزمرہ میں چہل قدمی صحت کیلئے فائدہ مند ثابت ہوتی ہے۔

less

ex

خراب غذائی عادات

آج کل جنک یا فاسٹ فوڈ کا استعمال بہت عام ہوگیا ہے جو مختلف امراض کا سبب بن کر قبل از وقت موت کا سبب بن سکتا ہے۔

junk

کم سونا یا بہت زیادہ سونا

آج کل اوسطاً ہر فرد ایک ماہ میں تیرہ راتیں مکمل نیند نہیں لے پاتا، اگرچہ یہ جان لیوا تو نہیں مگر جب آپ نیند سے بوجھل آنکھوں کے ساتھ گاڑی چلارہے ہو تو آپ خود کو اور دیگر افراد کو خطرے میں ڈال رہے ہوتے ہیں، کیونکہ توجہ نہ ہونا اور سست ردعمل عمل حادثات کا سبب بن جاتا ہے، اسی طرح زیادہ سونا بھی جان لیوا ہوسکتا ہے۔

sleep

تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ ایسے لوگ جن میں یہ عادات موجود ہو ، ان میں موت کا خطرہ پانچ گنا زیادہ ہوتا ہے، اگر کوئی شخص زیادہ دیر تک بیٹھا رہے، زیادہ دیر تک سونا یا بہت کم سونا بھی قبل از وقت موت کا خطرہ کئی گنا بڑھا دیتا ہے۔

اس سے قبل امریکی تحقیق میں خبردار کیا گیا تھا کہ بہت زیادہ ٹیلیویژن دیکھنے کی عادت خطرناک بیماریوں کا سبب بن سکتی ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ ساڑھے تین گھنٹے سے زیادہ ٹیلیوڑن دیکھنا نہ صرف امراض قلب اور کینسر کا خطرہ بڑھاتا ہے بلکہ ذیابیطس، انفلوائنزا، نمونیا، پارکنسن اور جگر کے امراض کا بھی باعث بن سکتا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top