The news is by your side.

Advertisement

مقتول علی رضاعابدی کی والدہ کا چیف جسٹس پاکستان سے نوٹس لینے کا مطالبہ

کراچی : مقتول سابق رکن قومی اسمبلی علی رضاعابدی کی والدہ نے بیٹے کے قتل کی تفتیش پر سوالات اٹھاتے ہوئے چیف جسٹس پاکستان سے نوٹس لینے کا مطالبہ لینے کا مطالبہ کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں سابق رکن قومی اسمبلی علی رضا عابدی کی والدہ کی پریس کانفرنس کرتے ہوئے بیٹے کے قتل کی تفتیش پر سوالات اٹھا دیے اور چیف جسٹس پاکستان سے نوٹس لینے کا مطالبہ بھی کیا۔

علی رضا عابدی کی والدہ نے کہا سی ٹی ڈی تمام گواہیوں کویکسر نظر انداز کر رہا ہے، گرفتار ملزمان کا مجسٹریٹ کے سامنے بیان ریکارڈ نہیں کیا ، تفتیشی ادارے سے کوئی امید نہیں ہے۔

انھوں نے مطالبہ کیا ایک اعلی سطح کی تفتیشی ٹیم تشکیل دی جائے ، عینی شاہد کو گواہان میں شامل نہ کرنا سوالیہ نشان پیدا کر رہا ہے ، سی ٹی ڈی آخر کیوں گواہان کو نظر انداز کر رہا ہے۔

مزید پڑھیں : علی رضا عابدی کو قتل کرنے کیلیے8 لاکھ روپے ملے، ملزمان کا اعتراف

یاد رہے 25 دسمبر کو کراچی کے علاقے ڈیفنس میں متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سابق رہنما علی رضا عابدی قاتلانہ حملے میں جاں بحق ہو گئے تھے، سی سی ٹی وی فوٹیج کے مطابق دو موٹر سائیکل سوار دہشت گردوں نے ان پر قاتلانہ حملہ کیا۔

بعد ازاں سیکورٹی اداروں نے ان کے قتل میں ملوث چار افراد کو گرفتار کیا تھا ، اہم ملزم ایئر پورٹ سے بیرون ملک فرار ہونے کی کوشش کر رہا تھا جسے حراست میں لیا گیا، اس کی نشان دہی پر مزید تین افراد کو گرفتار کیا گیا تھا۔

سابق ایم کیو ایم رہنما علی رضا قتل میں ملزمان سے تفتیش کے دوران انکشاف میں یہ بات بھی سامنے آئی تھی کہ لیاری سے تعلق رکھنے والی 11 رکنی ٹیم سابق ایم این اے کے قتل میں ملوث ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں