تازہ ترین

فیض آباد دھرنا : انکوائری کمیشن نے فیض حمید کو کلین چٹ دے دی

پشاور : فیض آباد دھرنا انکوائری کمیشن کی رپورٹ...

حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کردیا

حکومت کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی نئی قیمتوں...

سعودی وزیر خارجہ کی قیادت میں اعلیٰ سطح کا وفد پاکستان پہنچ گیا

اسلام آباد: سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان...

حکومت کل سے پٹرول مزید کتنا مہنگا کرنے جارہی ہے؟ عوام کے لئے بڑی خبر

راولپنڈی : پیٹرول کی قیمت میں اضافے کا امکان...

نئے قرض کیلئے مذاکرات، آئی ایم ایف نے پاکستان کے لیے خطرے کی گھنٹی بجادی

واشنگٹن : آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹیلینا...

الیکشن والے دن موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ بالکل درست تھا، انوار الحق کاکڑ

اسلام آباد : سابق نگراں وزیراعظم انوارالحق کاکڑ کا کہنا ہے کہ الیکشن والےدن موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ بالکل درست تھا کیونکہ ہم ایسی صورتحال میں الیکشن کرانےجارہےتھے جہاں سیکیورٹی تھریٹس تھے۔

تفصیلات کے مطابق سابق نگراں وزیراعظم انوارالحق کاکڑ نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام ‘خبر میں مہر بخاری کے ساتھ’ میں گفتگو کرتے ہوئے انتخابات کے حوالے سے کہا کہ الیکشن جب بھی ہوتےہیں اس پرسوالات اٹھائےجاتےہیں، 2002کے بعد جس طرح الیکشن ہوتےآرہےہیں اس باربھی ویسےہی ہوئے، کسی کودھاندلی کی شکایت ہے توفورمزموجودہیں وہاں جاکرسوالات اٹھائیں۔

انوارالحق کاکڑ کا کہنا تھا کہ ایک نظام موجودہےاس کےتحت ہی مسائل کا تدارک کیاجاسکتاہے، آئین کےمطابق ٹریبونل بنتےہیں جن میں دھاندلی کی شکایت کاحل نکلتا ہے۔

سابق نگراں وزیراعظم نے کہا کہ ہم ایسی صورتحال میں الیکشن کرانےجارہےتھے جہاں سیکیورٹی تھریٹس تھے، الیکشن والے دن موبائل فون سروس بند کرنے کا فیصلہ بالکل درست تھا۔

انھوں نے سوال کیا کہ 2018میں جب الیکشن ہوئے تھے تو کیا چند گھنٹےمیں نتائج آگئےتھے، 6 کروڑ لوگوں نے حق رائےدہی استعمال کیا، نتائج دینے میں وقت لگتا ہے۔

عہدے سے متعلق سوال پرانوارالحق کاکڑ کا کہنا تھا کہ سینیٹ الیکشن کیلئےتیاری کررہاہوں، کسی عہدےکی کوئی پیشکش نہیں ہوئی۔

محسن نقوی کے حوالے سے نگراں سابق وزیراعظم نے کہا کہ محسن نقوی نےنگراں حکومت میں اچھاپرفارم کیاہے، ان کے اور میرے درمیان کوئی مقابلہ نہیں ہے، نگراں حکومت میں جوکردارتھااسےبخوبی نبھایاہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ تنقید کی گئی ہے کہ نگراں حکومت کی طوالت کیلئے نگراں وزیراعظم بنایا گیا، الیکشن بھی ہوگئے، نئی حکومت بھی بن گئی، اب لوگوں کوجواب بھی مل گیا ہوگا۔

Comments

- Advertisement -