The news is by your side.

Advertisement

آریان کی گرفتاری : شاہ رخ خان کیلئے کیا کیا مشکلات لے آئی؟؟

ممبئی : بالی ووڈ کے کنگ خان اپنے صاحبزادے آریان کی گرفتاری کے بعد مالی مشکلات سے بھی دوچار ہوگئے، اطلاعات کے مطابق بھارتیہ جنتا پارٹی بھی ان کیخلاف کھل کر سامنے آچکی ہے۔

اس حوالے بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ تعلیم کے فروغ کیلیے کام کرنے والی ٹیکنالوجی کمپنی بائجوز نے آریان خان کی ایک منشیات کیس میں گرفتاری کے بعد شاہ رخ خان سے علیحدگی اختیار کرلی ہے۔

بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق بالی ووڈ کے ’بادشاہ‘ کہلانے والے اداکار شاہ رخ خان بہت ساری ملکی اور غیر ملکی کمپنیوں کے لیے اشتہارات میں کام کرتے ہیں۔

“بائجوز” نے آریان خان کی منشیات کیس میں گرفتاری کے بعد اپنی کمپنی کے تمام اشتہارات جن میں شاہ رخ خان نے کام کیا تھا وہ میڈیا پر چلنے سے روک دیے ہیں تاہم کمپنی کی جانب سے باضابطہ طور پر شاہ رخ خان سے کو اپنے برانڈ سے علیحدہ کرنے کا اعلان نہیں کیا۔

واضح رہے کہ آریان خان کو گذشتہ ہفتے کی شب سینٹرل ایجنسی نے ممبئی سے ایک جہاز پر چھاپہ مارنے کے بعد گرفتار کیا تھا اور کہا تھا کہ ان سے منشیات برآمد ہوئی ہیں۔

بعد ازاں جمعے کو آریان خان کی ضمانت کی درخواست ممبئی کی ایک عدالت نے مسترد کردیا تھا۔ ٹوئٹر پر اس وقت شاہ رخ خان سے منسلک مصنوعات کے بائیکاٹ کے حوالے سے ایک ٹرینڈ بھی چل رہا ہے۔

انڈین صحافی مکیش کمار نے اپنی ایک ٹویٹ میں “بائجوز” کو شاباشی دیتے ہوئے کہا کہ میں ان تمام مصنوعات کا بائیکاٹ کررہا ہوں جس کی شاہ رخ خان تائید کرتے ہیں۔

انڈین وزیراعظم نریندر مودی کی بھارتیہ جننتا پارٹی (بے جے پی) سے ہمدردی رکھنے والے سادھو یوگی دیوناتھ نے ایک ٹوئیٹ میں کہا کہ ’شاہ رخ خان کی ہر فلم کا بائیکاٹ کریں۔‘

سوشل میڈیا پر اس ٹرینڈ کا باغور جائزہ لیا جائے تو گمان ہوتا ہے کہ اس مہم کو چلانے کے پیچھے بی جے پی کے اراکین یا ان کے حامیوں کا کردار نظر آتا ہے۔

انڈین ریاست ہریانہ میں بے جے پی کے آئی ٹی سیل کے انچارج ارن یادیو نے اپنی ٹوئیٹ میں لکھا کہ ’میں ان تمام مصنوعات جن کے اشتہارات میں شاہ رخ خان موجود ہیں ان کا بائیکاٹ کررہا ہوں۔‘

وزیراعظم مودی ہی کی جماعت کے ایک اور رکن نریندر کمار چاولہ نے لکھا کہ میں بحیثیت قوم پرست اس ٹرینڈ کی حمایت کرتا ہوں۔

بی جے پی کے ایک ترجمان گورو گویل نے اپنی ٹوئیٹ میں لکھا کہ ’ایس آر کے نے ایک بار کہا تھا کہ انڈیا میں عدم برداشت بڑھتی جارہی ہے۔ ہاں، وہ درست تھے انڈیا منشیات کو لے کر عدم برداشت کا شکار ہے۔‘

جہاں انڈیا کی حکمران جماعت سے منسلک افراد بالی ووڈ اداکار کے خلام مہم چلا رہے ہیں، وہیں شاہ رخ خان کے دفاع کے لیے ان کے پرستار بھی سوشل میڈیا کے میدان میں لڑتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔

ٹوئٹر پر اس وقت ایک اور ٹرینڈ چل رہا ہے جس کا مقصد یہ بتانا ہے کہ’مودی کو بھی شاہ رخ خان برانڈ کی ضرورت ہے۔

ایک صارف نے انڈین وزیراعظم کی ایک ٹوئیٹ کا سکرین شاٹ پوسٹ کیا جس میں وہ شاہ رخ خان سے کہہ رہے تھے ’ڈئیر شاہ رخ خان، آئیں 18 سے 24 سالہ لوگوں کی حوصلہ افزائی کریں ووٹ ڈالنے کے لیے۔

صارف نے اس اسکرین شاٹ کیساتھ لکھا ’جب گجرات کے ایک سیاستدان کو سب سے بڑے برانڈ کی ضرورت تھی ووٹرز کی حوصلہ افزائی کرنے کے لیے۔

ڈیمن نامی ایک صارف نے لکھا کہ ’شاہ رخ خان کی وجہ سے انڈیا دنیا بھر میں پہچانا جاتا ہے۔

آریان خان کے خلاف مقدمے اور اس کے بعد چلائی جانے والی مہم پر شاہ رخ خان یا ان کی اہلیہ فلم پروڈیوسر گوری خان کا اب تک کوئی براہ راست بیان سامنے نہیں آیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں