The news is by your side.

Advertisement

ڈگری ڈگری ہوتی ہے: اسلم رئیسانی نے قوم سے معافی مانگ لی

کوئٹہ: ڈگری ڈگری ہوتی ہے اصلی ہو یا جعلی، مشہور زمانہ بیان دینے والے اسلم رئیسانی نے قوم سے معافی مانگ لی۔

تفصیلات کے مطابق اراکین اسمبلی کی جعلی ڈگریوں کے حوالے سے ماضی میں بیان دینے والے سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان نے ایک انٹرویو میں قوم سے معافی مانگ لی ہے۔

اسلم رئیسانی نے بتایا کہ وہ ان دنوں ایم فِل کی ڈگری کے لیے پڑھائی کر رہے ہیں، ان کا کہنا تھا کہ ایم فِل کے بعد وہ پی ایچ ڈی کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

بلوچستان کے سابق وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ان کا ارادہ ہے کہ انسانی ماحول پر تحقیق کریں، وہ پی ایچ ڈی کرنا چاہتے ہیں، اور نوجوانوں کے ساتھ یونی ورسٹی میں پڑھنے کا مزا آ رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:  حکومت کی پالیسی نہیں کہ کسی کوجعلی ڈگری پربھرتی کرے، اعظم سواتی

اسلم رئیسانی کا کہنا تھا کہ ان سے صحافیوں نے صوبائی اسمبلی کے اراکین کی ڈگریاں جعلی ہونے کا سوال کیا تو انھوں نے کہا کہ ڈگری ڈگری ہوتی ہے اصلی ہو یا جعلی، یہ بیان ان کے گلے پڑ گیا، جس پر عوام سے معافی چاہتا ہوں۔

یاد رہے کہ 64 سالہ نواب محمداسلم خان رئیسانی نے پولیٹیکل سائنس میں ماسٹرز آف فلاسفی کی ڈگری حاصل کرنے کے لیے بلوچستان یونی ورسٹی میں داخلہ لیا ہے۔

اسلم رئیسانی 2008 سے 2013 تک بلوچستان کے وزیر اعلیٰ رہے، سیاست میں آنے سے قبل وہ پولیس میں ڈی ایس پی کے عہدے پر فائز تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں