The news is by your side.

Advertisement

بھارت کو کورونا وائرس کے بعد ایک اور بڑی آفت کا سامنا

نئی دہلی : بھارت کی تین ریاستوں میں مختلف مقامات پر بڑی تعداد میں پرندوں کی اچانک  ہلاکتوں کا انکشاف ہوا ہے، تحقیق کے بعد پرندوں میں برڈ فلو کی تصدیق ہوگئی۔

بھارت کی ریاستوں کیرالا، ہماچل پردیش اور راجستھان میں مختلف مقامات پر بڑی تعداد میں پرندوں کی موت واقع ہوئی ہے، تحقیق کے بعد مرنے والے پرندوں میں ایچ 5 این 8 برڈ فلو پایا گیا ہے، بیماری کی تصدیق کے بعد متاثرہ علاقوں میں مختلف نوعیت کی پابندیاں عائد کردی گئی ہیں۔

اس حوالے سے بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ بھوپال کی ایک لیبارٹری میں مرنے والے پرندوں کے نمونے پر تحقیق کی گئی جس کے بعد یہاں کیرالہ کے الپوزا اور کوٹایم اضلاع میں برڈ فلو پھیلنے کا انکشاف ہوا ہے۔

ماہرین کے مطابق پرندوں کی ہلاکت کا سبب بننے والی یہ  بیماری برڈ فلو ایوین انفلوئنزا کی ایک ذیلی قسم ہے، اس وائرل انفیکشن نے بھارت کے متعدد علاقوں کو متاثر کیا ہے۔

ریاست کے وزیر برائے جنگلات نے میڈیا کو بتایا کہ اس وائرل بیماری کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے تمام تر اقدامات کیے گئے ہیں تاہم ابھی تک اس وائرس سے انسانوں کے متاثر ہونے کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے، ان کا کہنا تھا کہ یہ بات یقین سے نہیں کہی جاسکتی کہ یہ وائرس انسانوں کو متاثر کرے گا یا نہیں؟

انہوں نے کہا کہ متاثرہ علاقوں میں ایسے پرندوں کو ختم کرنے کے لیے ایک ریپڈ رسپانس ٹیم تشکیل دی گئی ہے جن علاقوں میں برڈ فلو کی تصدیق ہوئی ہے وہاں 1 مربع کلومیٹر کے دائرے میں موجود تمام مرغیوں اور پرندوں کو احتیاطی طور پر ختم کیا جائے گا تاکہ اس فلو کو روکا جاسکے۔

ایک اندازے کے مطابق اس فیصلے کے تحت کیرالا میں تقریباً 48ہزار پرندوں کو مارنا پڑسکتا ہے، وزیر نے مزید کہا کہ پرندوں کے مالکان کو ہونے والے اس نقصان کی تلافی کی جائے گی۔

اس کے علاوہ ہماچل پردیش کے معروف سیاحتی مقام پونگ ڈیم میں موجود پرندوں میں بھی برڈ فلو کی تصدیق ہوئی ہے، ڈیم میں سینکڑوں مہاجر پرندوں کی موت کے بعد نمونے جانچ کے لیے بھیجے گئے ہیں، تحقیق کے بعد جالندھر اور پالم پور مرنے والے پرندوں میں بھی برڈ فلو کی تصدیق ہوئی ہے۔

علاوہ ازیں ہریانہ کے ضلع باروالا، رائے پور رانی اور کوٹ میں واقع پولٹری فارموں میں لاکھوں مرغیاں ہلاک ہوگئی ہیں۔ خدشہ ہے کہ یہ مرغیاں برڈ فلو کی وجہ سے مری ہیں۔ معتلقہ محکمہ نے مرغیوں کی ہلاکت کے معاملے میں ضلعی حکام سے رپورٹ طلب کی ہے تاکہ پتہ چل سکے کہ اب تک کتنی مرغیاں مر چکی ہیں۔

مہاجر پرندوں کی موت کے بعد ضلع انتظامیہ کے اجلاس میں کئی اہم فیصلے لیے گئے، اس کے تحت پونگ ڈیم سے متصل چار اسمبلی حلقوں میں انڈے، چکن، میٹ اور مچھلی کی دکانیں بند رہیں گی اور اس کی سپلائی بھی بند رہے گی اور ڈیم میں سیاحتی سرگرمیوں، بوٹنگ اور فشنگ پر عائد پابندی بھی جاری رہے گی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں