حکومت نے بلیو وھیل اور مومو جیسے جان لیوا سوشل گیمز پر پابندی عائد کردی -
The news is by your side.

Advertisement

حکومت نے بلیو وھیل اور مومو جیسے جان لیوا سوشل گیمز پر پابندی عائد کردی

اسلام آباد : انفارمیشن ٹیکنالوجی کے وفاقی وزیر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے متنازع گیمز بلیو وھیل اور مومو جیسے جان لیوا تمام سافٹ ویئرز اور سوشل گیمز پر پابندی لگانے کا اعلان کردیا۔

تفصیلات کے مطابق حکومت نے انٹرنیٹ پر کھیلے جانے والے جان لیوا گیمز پر پابندی کا فیصلہ کرلیا تاکہ خودکشی کے واقعات میں کمی ہو سکے۔

اس سلسلے میں آئی ٹی کے وفاقی وزیر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ پاکستان میں بلیو ویل اور مومو جیسے گیمز کی کوئی گنجائش نہیں، کھیل ہی کھیل میں انسانی جانوں کا ضیاع ناقابل برداشت ہے۔

ایسے موبائل ایپس اور پروگرامز کا استعمال سائبر کرائم کے زمرے میں آئے گا، بلیو وھیل اور مومو گیمز سے اب تک دنیا بھر میں ایک سو چالیس سے زائد بچے اور نوجوان اپنی جانیں گنوا چکے ہیں۔

واضح رہے کہ بلیو وہیل چیلنچ کھیلنے والوں کو ایک کے بعد ایک مشکل ٹاسک دیا جاتا ہے اور آخری ٹاسک خود کشی ہوتا ہے، بلیو وہیل گیم روس کے ایک نوجوان نے تیار کیا تھا جسے حکومت نے ایک سال قید کی سزا دے رکھی ہے۔

اس گیم کے متاثرین دنیا بھر کے مختلف ممالک برازیل، بلغاریہ، چلی، چین، جارجیا، بھارت، اٹلی، کینیا، پاکستان، پیراگوئے، پرتگال، روس، سعودی عرب، سربیا، اسپین، امریکا اور یوراگوئے میں سامنے آچکے ہیں۔

 مزید پڑھیں: پشاورکے نوجوان نے اینٹی بلیو وہیل گیم بنا کرتوڑ نکال لیا

پاکستان کے شہر مردان سے تعلق رکھنے والے دو نوجوانوں نے بلیو وہیل کے جان لیوا گیم کا ٹاسک مکمل کرنے کی کوشش کی اور وہ اسپتال پہنچ گئے تھے، متاثرہ نوجوانوں کی عمریں19 اور21 سال کے قریب تھیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں