The news is by your side.

Advertisement

عبدالقادر بلوچ جمہوری بیانیے کا بوجھ نہیں اٹھا سکے: شاہد خاقان

اسلام آباد: سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے رد عمل میں کہا ہے کہ عبدالقادر بلوچ جمہوری اور آئینی بیانیے کا بوجھ نہیں اٹھا سکتے توگھر بیٹھیں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق مسلم لیگ اور نواز شریف کے بیانیے سے کھل کر مخالفت کرنے والے سابق لیگی رہنما نے گزشتہ روز کہا تھا کہ میں خود بھی فوجی رہ چکا ہوں، پاک فوج کے خلاف بیانیہ میرے لیے ناقابلِ برداشت ہے۔

ن لیگ کے سینئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے گزشتہ رات اس پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ عبدالقادر بلوچ کا فیصلہ ان کو مبارک ہو، اس سے ان کی اپنی سیاست تباہ ہوگی، چوہدری نثار کا فیصلہ بھی سب کے سامنے ہے۔

انھوں نے کہا اگر کوئی بات تھی تو عبدالقادر بلوچ مجھے بتاتے، مریم نواز سے بھی انھوں نے کوئی ذکر نہیں کیا، وہ جمہوری اور آئینی بیانیے کا بوجھ نہیں اٹھا سکتے تو گھر بیٹھ جائیں۔

فوج کے خلاف بیانیہ ناقابل برداشت، خود بھی فوجی رہ چکا ہوں، عبد القادر بلوچ

شاہد خاقان نے کہا ن لیگ کا بیانیہ ہے کہ ملک میں آئین کی بالا دستی ہو، عبدالقادر کی اپنی مرضی ہے وہ جو کرنا چاہیں کریں، کسی موقع پر بھی عبدالقادر نے تحفظات کا اظہار نہیں کیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز کوئٹہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عبد القادر بلوچ نے کہا تھا کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے پلیٹ فارم سے پاک فوج کے خلاف نازیبا زبان استعمال ہوئی، افواجِ پاکستان کو نشانہ بنانا ناقابل قبول ہے، ثنااللہ زہری کو اسٹیج پر نہ بلانے پر تو بات ہو سکتی تھی مگر میں نے مسلم لیگ ن سے ایک ہی وجہ سے علیحدگی اختیار کی۔

عبدالقادر بلوچ نے کہا ’ن لیگ سے علیحدگی کی واحد وجہ فوج کے خلاف بیانیہ ہے کیوں کہ میں خود بھی فوجی رہا ہوں، میرے لیے یہ سب قابلِ برداشت نہیں ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں