The news is by your side.

چوہدری خاندان میں اختلافات ختم کرانے کے لئے پانچ ملاقاتوں کا انکشاف

لاہور: ق لیگ کے چوہدری خاندان میں اختلافات ختم کرانےکے لیے پانچ ملاقاتوں کا انکشاف ہوا ہے، تاہم کوئی خاطر خواہ نتیجہ نہیں نکل سکا۔

ذرائع کے مطابق ق لیگ میں اختلافات کی خبروں کے بعد چند روز کے دوران یگے بعد دیگرے پانچ ملاقاتیں ہوئیں، چوہدری شجاعت اور پرویزالہٰی کی موجودگی میں سب نے ان میٹنگز میں شرکت کی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پرویزالٰہی اور چوہدری وجاہت کی جانب سےسالک حسین کو حکومت چھوڑنےکا کہا گیا، اسپیکر پنجاب اسمبلی کا موقف تھا کہ چوہدری وجاہت فوری طور پر حکومت سےنکلیں تاکہ پارٹی کا ایک ہی مؤقف رہے۔

ذرائع نے بتایا کہ پہلی تین میٹنگز میں سالک حسین نےکہا کہ حکومت چھوڑنےکے لیےانہیں کچھ وقت دیا جائے، میٹنگز کے بعد آصف زرداری نےچوہدری شجاعت اوران کے بیٹوں سےملاقات کرلی۔

یہ بھی پڑھیں: چوہدری ظہورالہٰی کے پوتے نے زرداری سے ڈالرز مانگے

اگلی میٹنگز میں سالک حسین نےکہا کہ ہم دونوں گروپس کو اپناعلیحدہ مؤقف رکھناچاہیے، چوہدری شجاعت کےبیٹوں نے پرویز الہیٰ سے کہا کہ آپ عمران خان اور ہم شہبازشریف کےساتھ رہتے ہیں تاہم ملاقات میں موجود مونس الٰہی اور چوہدری وجاہت نے ایک ہی جماعت میں رہ کر دو مؤقف رکھنےکو مسترد کردیا اور یوں پانچوں میٹنگز کا کوئی خاطر خواہ نتیجہ نہ نکل سکا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ چوہدری شجاعت نے ایک اور میٹنگ بلائی ہےجس میں اختلافات ختم کرنےکی آخری کوشش ہوگی، مزید اختلافات کو ہوا نہ ملنے کی حکمت عملی کے تحت چوہدری شجاعت نے وجاہت کے بیان کے بعدخاندان کےتمام افراد کوبیان سے روک دیا ہے، اب آئندہ دو روز میں فیصلہ کن میٹنگ ہونےکا امکان ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں