The news is by your side.

Advertisement

پُر امن ہیں لیکن علاقے کا ایک انچ بھی نہیں دیں گے، چینی صدر

بیجنگ: چینی صدر شی جن پنگ نے کہا ہے کہ چین پُر امن ہی رہے گا لیکن پُرکھوں کے چھوڑے ہوئے ملکی علاقے کا ایک انچ بھی نہیں چھوڑیں گے۔

تفصیلات کے مطابق چینی صدر نے امریکی وزیر خارجہ کے دورے پر اُن سے ملاقات میں واضح کیا ہے کہ چین امن کے حوالے سے پُر عزم ہے لیکن پُرکھوں نے اپنے پیچھے ملک کا جو علاقہ چھوڑا ہے اس کا ایک انچ بھی کسی کو نہیں دیا جائے گا۔

چینی صدر نے چین کے پہلے دورے پر آئے ہوئے امریکی وزیر خارجہ جیمز میٹس سے کہا کہ چین کا اپنی حاکمیت اور علاقائی سالمیت کے حوالے سے نکتہ نظر انتہائی واضح ہے اور وہ اس حوالے سے کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گا۔

جنوبی بحیرۂ چین کے معاملے پر چین اور تائیوان کے درمیان موجود تناؤ کے تناظر میں چینی صدر کا یہ بیان امریکا کو واضح پیغام ہے کہ جمہوری اور خود مختار تائیوان کے قیام کے لیے اس کی کوششیں کام یاب نہیں ہونے دی جائیں گی۔

خیال رہے کہ چین کو اس بات کا یقین ہے کہ امریکا تائیوان کو خود مختاری کے لیے مسلح کر رہا ہے، جب کہ چین اس علاقے کو اپنے وجود کا مقدس حصہ سمجھتا ہے۔

امریکی وزیر خارجہ سے ملاقات کے دوران چینی صدر شی جن پنگ نے یقین دہائی کرائی کہ چین کو کسی اور کا علاقہ حاصل کرنے میں کوئی دل چسپی نہیں ہے۔

چینی فوج کی بحیرہ جنوبی چین میں عسکری سرگرمیاں، امریکا نے وارننگ دے دی


واضح رہے کہ امریکی وزیر خارجہ چین کے تین روزہ دورے پر ہیں جو کہ خطے میں چینی فوجی پیش رفت کے شدید ناقد رہے ہیں، امریکا نے حال ہی میں چین کی بین الاقوامی بحری مشقوں میں بھی حصہ لینے سے انکار کیا ہے۔

چینی صدر نے ملاقات میں واضح کیا کہ ہم دنیا میں افراتفری پیدا نہیں کرنا چاہتے، دوسری جانب جیمز میٹس نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ان کے مذاکرات ’انتہائی مثبت‘ رہے ہیں۔

خیال رہے کہ 2014 کے بعد سے جیمز میٹس پینٹاگون کے پہلے اعلیٰ عہدے دار ہیں جو چین کا دورہ کر رہے ہیں، انھوں نے چینی وزیر دفاع کو امریکا کے دورے کی دعوت بھی دی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں