site
stats
انفوٹینمنٹ

بادلوں میں بسا ایک جدید شہر

کراچی (ویب ڈیسک) – متحدہ عرب امارات کا دارلخلافہ ابوظہبی اپنی بلند و بالاعمارتوں کے باعث دنیابھرمیں پہچاناجاتاہے، لیکن اس شہر سے وابستہ دلچسپ بات جو دنیا کی نظروں سے اوجھل ہےوہ یہ کہ اس کی بلند و بالا عمارتیں اکثر و بیشتر بادلوں کے نرغے میں گھری رہتی ہیں۔

sky scraper

صحرائے عرب کی شمالی پٹی پر واقع یہ شہر انتہائی گرم اور مرطوب ہے اور یہاں کا عمومی درجہٗ حرارت چالیس ڈگری سینٹی گریڈ ہے جبکہ یہاں کاانتہائی درجۂ حرارت سن دوہزاردو میں 51.1 ڈگرسینٹی گریڈ ریکارڈ کیا گیا تھا۔

عموماً یہاں کا مطلع صاف رہتا ہے اور بادل خال خال ہی نظر آتے ہیں لیکن جب اس شہر کی فضائی تصویریں لی گئیں تو دنیا دنگ رہ گئی کہ دبئی کی بیشتر بلند عمارتوں کی سب سے اوپر کی منزلیں اکثر بادلوں میں گھری رہتی ہیں۔

sky 2

برج خلیفہ، برج العرب، پرنسز ٹاور، جے ڈبلیو میریٹ، 23 مرینا، اور دی ٹارچ وہ قابل ِ ذکر عمارات ہیں جو محاورتاً نہیں بلکہ حقیقتاً بادلوں کا سینہ چیرکرآسمانوں سے باتیں کرتی نظر آتی ہیں۔

اس خبرکی اشاعت تک دنیا کی بلند ترین عمارت کا اعزاز دبئی کی معروف عمارت ’برج خلیفہ‘ کو حاصل ہے لیکن جلد ہی سعودی عرب کے شہر جدہ میں انتہائی تیزی سے تعمیر ہونے والی عمارت ’کنگ ڈم ٹاور‘ یہ اعزازاپنے نام کرلے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top