The news is by your side.

پاکستان: موسمی تبدیلی سے سیکڑوں بھیڑ بکریاں ہلاک

سوات: پاکستان پر موسمی تبدیلی کے اثرات پڑنا شروع ہو گئے ہیں، شمالی علاقوں میں جون میں غیر متوقع برفباری سے سیکڑوں بھیڑ بکریاں ہلاک ہو گئیں۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان کے صوبہ خیبر پختون خوا میں موسمی تبدیلی کے اثرات کے طور پرغیر متوقع برف باری سے انسانوں کے ساتھ بڑی تعداد مں جانور بھی متاثر ہوگئے ہیں۔

ضلعی انتظامیہ سوات کے مطابق دیر اور سوات کے سنگم پر چمبر بانڈہ اور لوڑہ بانڈہ میں حالیہ برف باری سے 15 سو سے زائد بھیڑ بکریاں ہلا ک ہو گئیں، جب کہ ایک چرواہے کی ہلاکت کی بھی ضلعی انتظامیہ نے تصدیق کر دی ہے۔

ڈپٹی کمشنر سوات کے مطابق گزشتہ روز ریسکیو 1122 کے عملے نے متاثرہ علاقے میں ریسکیو آپریشن کیا، اور چمبر بانڈہ میں 100 بھیڑوں کو بچایا۔ انتظامیہ کے مطابق پہاڑی علاقے میں غیر متوقع برف باری سے بھیڑ بکریاں چرانے والے چرواہے بڑی تعداد میں متاثر ہوئے ہیں۔

مقامی شہری کا آنکھوں دیکھا احوال

برف باری سے متاثرہ علاقے کے رہائشی 65 سالہ حاجی عبدالرحیم نے کہا کہ انھوں نے اس موسم میں برف باری پہلی بار دیکھی ہے، شہری نے بتایا کہ جب ہمیں پتا چلا کہ پہاڑی کے اوپر حصے پر کچھ چرواہے پھنس گئے ہیں تو علاقے کے لوگوں نے اعلان کیا اور ہم وہاں روانہ ہو گئے۔

عبدالرحیم کے مطابق جب گاؤں والے اوپر پہنچ گئے تو ایک بوڑھے شخص کو زخمی حالت میں دیکھا گیا، گاؤں والوں نے مل کر اس شخص کو نیچے گاؤں پہنچا دیا، اور وہاں ان کو بلیک ٹی پلائی گئی اور گرم کمبل ڈالا گیا۔

مقامی شہری کے مطابق پہاڑ پر اور بھی چرواہے پھنسے ہوئے تھے، علاقے کے لوگ ان کو بھی گاؤں لائے، ان میں زیادہ تر جوان چرواہے تھے، تاہم ان میں ایک لاپتا تھا، عبدالرحیم نے بتایا کہ جب ہم اس کو ڈھونڈنے گئے تو وہ پہاڑی سے نیچے ایک کھائی میں ملا، جہاں وہ گر کر جاں بحق ہوگیا تھا، ہم اپنی مدد آپ کے تحت چادروں میں ان کی لاش گاؤں تک لے آئے۔

حاجی عبدالرحیم نے بتایا کہ ہم نے وہاں پر بڑی تعداد میں بھیڑوں کو دیکھا جو مر چکی تھیں، صحیح تعداد کا تو ہمیں نہیں پتا لیکن پہاڑی کے دوسری طرف بھی بڑی تعداد میں جانور مردہ پڑے تھے۔

جون کے مہینے میں برفباری

محکمہ جنگلات کے ترجمان لطیف الرحمن نے بتایا کہ موسم گرما میں پہاڑی علاقوں کے لوگ بھیڑ بکریاں پہاڑوں کی چوٹیوں پر چرانے کے لیے لے جاتے ہیں، مئی کے مہینے سے اکتوبر تک بھیڑ بکریاں اونچے پہاڑوں پر ہوتی ہیں، لیکن حالیہ غیر متوقع برف باری نے چرواہوں اور جانوروں کو مشکل میں ڈال دیا ہے۔

جون کے مہینے میں پاکستان کے میدانی علاقوں میں شدید گرمی پڑتی ہے، لیکن اس بار جون کے مہینے میں خیبر پختون خوا کے پہاڑی علاقوں میں غیر متوقع برف باری کی وجہ سے میدانی علاقوں میں بھی جون کے مہینے میں موسم خوش گوار رہا۔

پشاور میں 21 اور 22 جون کو رات کے وقت درجۂ حرات 16 ڈگری سنٹی گریڈ تک گر گیا تھا، محکمہ موسمیات کے ڈپٹی ڈائریکٹر فہیم احمد نے بتایا کہ شاید یہ پہلی بار ہوا کہ جون میں موسم اتنا سرد ہو گیا ہے، جون کے مہینے میں پہلی بار ایسی تبدیلی دیکھی گئی ہے۔

محمد فہیم نے بتایا کہ بابو سرٹاپ، چترال، اور سوات کے کچھ اونچے پہاڑوں پر کبھی کبھی ایسا ہوتا ہے کہ ہلکی سی برف باری ہو جاتی ہے لیکن وہ دھوپ نکلتے ہی ختم ہو جاتی ہے، مگر یہ برف باری معمول سے زیادہ ہے، اس بار برف باری نیچے علاقوں میں بھی ہوئی ہے۔

محکمہ ماحولیات کی جانب سے بھی جون کے مہینے میں ایسی برف باری کو پاکستان پر موسمیاتی تبدیلی کے گہرے اثرات قرار دیے جا رہے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں