لال بیگوں کے آٹے سے پروٹین بھری ڈبل روٹی انسانی خوراک کے لیے تیار -
The news is by your side.

Advertisement

لال بیگوں کے آٹے سے پروٹین بھری ڈبل روٹی انسانی خوراک کے لیے تیار

برازیلیا: برازیل کے تحقیقی ماہرین نے انسانی جسم میں موجود پروٹین کی کمی کو پورا کرنے کے لیے لال بیگوں والی ڈبل روٹی تیار کرلی جسے مستقبل میں عام خوراک کے طور پر استعمال کیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق برازیل کی یونیورسٹی آف ریو گرانڈ نے اقوام متحدہ کی پیش گوئی کو مدنظر رکھتے ہوئے ایسی ڈبل روٹی تیار کرلی جو مستقبل میں انسان استعمال کرسکیں گے۔

تحقیقاتی ماہرین نے اقوام متحدہ کی آبادی سے متعلق رپورٹ کو سامنے رکھا جس میں کہا گیا تھا کہ سنہ 2050 تک کراہ ارض پر انسانوں کی آبادی 9 کھرب 70 ارب سے تجاوز کرسکتی ہے۔

اقوام متحدہ کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق اگر آبادی اتنی تعداد میں بڑھ گئی تو انسانی خوراک کی نہ صرف قلت ہوگی بلکہ قحط پڑجائے گا۔ آبادی کے بڑھتے ہوئے خدشے کے باعث نہ صرف خوراک میں کمی ہوجائے گی بلکہ انسان کے درکار پروٹین کی مقدار کو فراہم کرنا بھی ناگزیر ہوجائے گا۔

ان تمام باتوں کو مدنظر رکھتے ہوئے برازیل کے تحقیقاتی ماہرین نے آٹے اور معدے میں لال بیگوں کو ملا کر ایسی ڈبل روٹی تیار کی جو انسانی جسم میں موجود پروٹین کی مقدار کو پورا کرنے میں معاون ثابت ہوگی۔

مزید پڑھیں: رنگ گورا کرنے کی کریمز میں لال بیگوں کا استعمال

محقق اندریسا جینزن کا کہنا تھا کہ ڈبل روٹی کے لیے گندگی میں بیٹھنے والے لال بیگ استعمال نہیں کیے گئے بلکہ پالتو ’لابسٹر‘ نامی لال بیگوں کو آٹے میں شامل کیا گیا۔

اُن کا کہنا تھا کہ ابتدائی مرحلے میں شمالی افریقہ میں پائے جانے والے لال بیگوں کو لاکر آٹے کے ساتھ پیسا گیا، مارکیٹ میں ان لال بیگوں کی قیمت 51 ڈالر فی کلو ہے۔

برازیل کے محققین کا کہنا تھا کہ پروٹین کی کمی کو ویسے تو دیگر کیڑوں کو استعمال کر کے بھی پورا کیا جاسکتا ہے مگر لال بیگوں کا چناؤ دو وجوہات کی بنا پر کیا گیا، پہلی تو یہ کہ ان میں سب سے زیادہ پروٹین موجود ہے اور دوسری اہم وجہ یہ ہے کہ کراض ارض پر یہ لاکھوں سال سے موجود ہیں جو قدرتی طور پر اپنا ارتقائی عمل اور جنیاتی خصوصیات بھی رکھتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: چین نے تیس کروڑ امریکی لال بیگ کیوں پال لیے؟

محققین کی جانب سے تیار کی جانے والی ڈبل روٹی کو جینزن نے پروٹین سے بھرپور قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس تیاری کے لیے استعمال ہونے والے آٹے میں 10 فیصد لال بیگوں کا استعمال کیا گیا جس سے پروٹین میں 133 فیصد اضافہ ہوا جبکہ ایک عام ڈبل روٹی میں 9.7 گرام پروٹین ہوتے ہیں۔

اندریسا کا کہنا تھا کہ ڈبل روٹی اور عام ڈبل روٹی میں کوئی خاص فرق نہیں کیونکہ ہم نے اس کی ساخت، خوشبو، رنگ اور ذائقے کا مشاہدہ کیا تو کوئی خاص تبدیلی نظر آئی البتہ کچھ کھانے والوں کو یہ مونگ پھلی کے ذائقے جیسے لگ سکتے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں