The news is by your side.

Advertisement

سابق باغی گسٹاوو پیٹرو کولمبیا کے نئے صدر منتخب

بوگوٹا: کولمبیا نے سابق باغی گسٹاوو پیٹرو کو ملک کا پہلا بائیں بازو کا صدر منتخب کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق سابق گوریلا گسٹاو پیٹرو کولمبیا کے انتخابات جیت کر بائیں بازو کے پہلے صدر بن گئے۔

جنوبی امریکی ملک کولمبیا میں اتوار کو انتخابی عمل مکمل ہو گیا، عوام کو سابق باغی جنگجو کا سماجی اور اقتصادی تبدیلی کا وعدہ بھا گیا۔

بائیں بازو کے امیدوار گسٹاوو پیٹرو 50.47 فی صد ووٹ لے کر بائیں بازو کی جانب سے ملک کے پہلے صدر بنے۔ رئیل اسٹیٹ کے مقبول رہنما سے سیاست دان بننے والے مخالف امیدوار روڈلفو ہرنینڈز 47.27 فی صد ووٹ حاصل کر سکے۔

کولمبیا کے اکثر لوگوں نے غربت، دیہی تشدد، شہری جرائم اور مقامی بدعنوانی سے نمٹنے کے لیے سابق گوریلا اور بوگوٹا کے سابق میئر گستاوو پیٹرو سے اپنی امیدیں وابستہ کر رکھی ہیں۔

اتوار کو ہونے والے رن آف الیکشن میں برتری حاصل کرنے والے سابق جنگجو لیڈر جولائی میں بہت سے چیلنجوں کے درمیان اپنا عہدہ سنبھالیں گے، جن میں سے عدم مساوات اور مہنگائی بھی شامل ہیں اور جن پر ملک میں شدید عدم اطمینان پھیلا ہوا ہے۔

پیٹروو کا انتخاب کولمبیا کے لیے ایک بڑی تبدیلی کا نشان ہے، ایک ایسا ملک جہاں پہلے کبھی بائیں بازو کا صدر منتخب نہیں ہوا، اس لحاظ سے کولمبیا نے جنوبی امریکی ریاستوں پیرو، چلی اور ہونڈوراس میں بائیں بازو کی اسی طرح کی فتوحات کی پیروی کی ہے۔

نتائج آنے کے بعد اتوار کی رات فاتح امیدوار گسٹاوو پیٹرو نے ٹویٹ کیا کہ آج کا دن عوام کے لیے جشن کا دن ہے، جس مسرت کا سمندر آج اس ملک کے دل میں جاگزیں ہوا ہے، میری دعا ہے کہ سارے دکھ اس میں ڈوب جائیں۔

اپنی فتح کی تقریر کے دوران پیٹروو نے سب کے متحد ہونے کی اپیل کی، اور اپنے سخت ترین ناقدین کی طرف امن کا ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا کہ کولمبیا کے مسائل پر بات کرنے کے لیے صدارتی محل میں حزب اختلاف کے تمام اراکین کا خیر مقدم کیا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں