The news is by your side.

Advertisement

اسٹیٹ بنک نے اعلیٰ تعلیمی قرضوں کے لئے 109 ارب روپے کی منظوری دے دی

کراچی: اسٹوڈنٹ لون اسکیم اپیکس کمیٹی نے تعلیمی سیشن 2013-14ء اور 2014-15ء کے لیے 109.22ملین روپے کی منظوری دے دی۔

بینک دولت پاکستان کے ڈپٹی گورنر جناب سعید احمد کی سربراہی میں قائم اپیکس کمیٹی برائے اسٹوڈنٹ لون اسکیم نے مستحق طلبہ کے لیے پاکستان کے اندراعلیٰ تعلیم کی تمام مدت کے لیے سود سے پاک 109.22ملین روپے کی منظوری دی ہے۔ یہ رقم، جو اپیکس کمیٹی کے ایک اجلاس میں منظور کی گئی، تعلیمی سیشن 2013-14ء اور 2014-15ء کے لیے ملک بھر کی پبلک سیکٹر جامعات کے مختلف شعبوں میں انڈرگریجویشن، گریجویشن اورپی ایچ ڈی کی سطح کے 729طلبہ کو دی جائے گی۔

یاد رہے کہ اسٹوڈنٹ لون اسکیم کا اعلان مالی سال 2002ء کے وفاقی بجٹ میں کیا گیا تھا جس کا مقصد ناکافی وسائل رکھنے والے لائق طلبہ کو مالی امداد کی فراہمی تھی۔ یہ قرضے پہلی قسط کی ادائیگی کی تاریخ سے زیادہ سے زیادہ 10 سال کی واپسی کی مدت کے لیے دیے جاتے ہیں اور پہلے روزگار کی تاریخ کے چھ ماہ بعد یا تعلیم مکمل ہونے کی تاریخ کے ایک سال بعد ماہانہ اقساط میں قابل واپسی ہیں، جو بھی پہلے مکمل ہو جائے۔ اسکیم کے ایڈمنسٹریٹرکی حیثیت سے نیشنل بینک آف پاکستان درخواستوں کی موصولی اور جانچ پڑتال سے لے کرقرضوں کی ادائیگی اوربازیابی کے تمام فرائض انجام دیتا ہے۔

یہ اسکیم اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر کی سربراہی میں ایک ایپکس کمیٹی کے زیرانتظام کام کررہی ہے۔ کمیٹی کے فرائض میں یہ امورشامل ہیں: قرضوں کی منظوری، اسکیم سے متعلق تمام پالیسی امور سے نمٹنا، ہر تعلیمی سال کے لیے رقوم کی منظوری؍رقوم مختص کرنا، رقوم اکٹھا کرنے میں معاونت اور اسکیم کی آڈٹ رپورٹوں کا جائزہ ۔

حالیہ اجلاس میں اسٹیٹ بینک آف پاکستان، نیشنل بینک آف پاکستان، ایم سی بی بینک لمیٹڈ، الائیڈ بینک لمیٹڈ، حبیب بینک لمیٹڈ اور یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ کے نمائندوں نے شرکت کی۔

کامیاب طلبا کے نام نیشنل بینک آف پاکستان کی ویب سائٹ پردستیاب ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں