The news is by your side.

Advertisement

سویڈن، ڈنمارک اور ہالینڈ میں کرونا پابندیاں ختم، رونقیں بحال

کورونا وائرس کے نئے ڈیلٹا ویریئنٹ کے خطرے کے باوجود تین یورپی ممالک سویڈن، ڈنمارک اور نیدرلینڈز میں زندگی وبا سے پہلے کی طرح بغیر پابندیوں کے رواں دواں ہے یا ایسا ہونے والا ہے۔ اس کا راز کیا ہے؟

اطلاعات یہ ہیں کہ نیدرلینڈ نے پچیس ستمبر سے مکمل ویکسی نیشن کرانے والے افراد کے کلبوں، پارٹیوں اور ریستورانوں میں جانے پابندی ختم کردی ہے تاہم ہر شہری کو ویکسی نیشن کارڈ ساتھ رکھنا لازمی قرار دیا ہے۔

ادھر ڈنمارک بھی گذشتہ ہفتے کرونا کی تمام پابندیاں ختم کرنے والا پہلا یورپی ملک بنا، جہاں کرونا وبا سے پہلے کی زندگی لوٹ آئی ہے، ملک میں کہیں بھی ماسک پہننے کی پابندی ختم کردی گئی ہے اور کسی جم یا کنسرٹ میں جانے کے لئے ویکسین پاس ضروری نہیں ہے۔

ڈنمارک کے وزارت صحت کا کہنا ہے کہ اب کووڈ نائنٹین ‘سماجی سطح پر خطرناک بیماری‘ تصور نہیں کی جائے گی۔

دوسری جانب سویڈن بھی انہی ممالک کی فہرست میں شامل ہونے والا ہے، ملک کی وزارت صحت نے بھی رواں ماہ کے آغاز پر اعلان کیا تھا کہ نجی اور عوامی اجتماعات میں مخصوص تعداد میں شرکت اور ہوم آفس کی ہدایت ستمبر کے اختتام پر ختم کر دی جائے گی، تاہم ویکیسن نہ لگوانے والے سیاحوں کو اب بھی نیگٹیو کرونا ٹیسٹ دکھانے کے ساتھ ساتھ قرنطینہ کرنا ہوگا۔

واضح رہے کہ ڈنمارک کے اسی فیصد بالغ افراد کو ویکیسن لگ چکی ہے جبکہ سویڈن میں یہ شرح ستر فیصد سے زائد بنتی ہے، نیدرلینڈز میں یہ شرح محض ساٹھ فیصد ہے لیکن اس کے باوجود وہاں پابندیاں ختم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں