The news is by your side.

Advertisement

جوؤں کا خاتمہ کرنے والی دوا سے کرونا کے علاج میں کامیابی، سائنس دانوں کا دعویٰ

سڈنی : آسٹریلیا کی موناش یونیورسٹی تحقیق کاروں نے انکشاف کیا ہے کہ جوؤں کو مارنے والی دوا نے 48 گھنٹوں کے دوران کوویڈ 19 وائرس کو ختم کردیا۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹ کے مطابق چین سے پھیلنے والے کرونا وائرس نے 200 کے قریب ممالک کو اپنی لپیٹ میں لےلیا ہے اور سائنس و طبی ماہرین کو علاج کے حوالے سے تاحال ناکامی کا سامنا ہے۔

آسٹریلیا کی یونیورسٹی موناش کے تحقیقی ماہرین نے دعویٰ کیا ہے کہ کووڈ ویکسین کی تیاری کے دوران ہونے والے تجربے میں مشاہدہ کیا گیا کہ جوؤں کو ختم کرنے والی دوا آئیورمیکٹن کرونا وائرس کے خاتمے کا بھی سبب بن رہی ہے۔

موناش بائیومیڈیسن ڈسکوری انسٹیٹویٹ کی ڈاکٹر کائلی واگاسٹاف کا کہنا ہے کہ ہم نے دیکھا کہ آئیور میکٹن دوا کی ایک خوراک بھی وائرس کے جینیاتی مادے کو 24 گھنٹے میں ختم کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک یہ تو معلوم نہیں ہوسکا ہے کہ آئیور میکٹن وائرس کو روکنے کےلیے کام کس طرح کرتی ہیں لیکن ممکن ہے کہ یہ وائرس کی میزبانی کرنے والے خلیوں کو نم کرتی ہو جس ان میں صفائی کی صلاحیت پیدا ہوتی ہے۔

اگلا مرحلہ انسانی جسم کے لحاظ سے اس کی مقدار کا تعین کرنا ہے کہ اس کی کتنی مقدار انسانی جسم کے لیے محفوظ ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ اس دوا کو کرونا وائرس کے خلاف استعمال کرنے سے پہلے پری کلینیکل ٹیسٹ اور جانچ پڑتال کےلیے فنڈنگ کی ضرورت ہوگی۔

خیال رہے کہ آئیورمیکٹن ایف ڈی اے سے منظور شدہ دوا ہے جو ایچ آئی وی، ڈینگی اور انفلوئنزا کے علاج میں بھی موثر ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں