The news is by your side.

Advertisement

کرونا بحران نے مصری فٹبالر کو ٹھیلا لگانے پر مجبور کردیا

قاہرہ : کرونا وائرس کی عالمگیر وبا نے معروف مصری فٹبالر کو مالی بحران کے باعث ٹھیلے پر مٹھائیاں بیچنے پر مجبور کردیا۔

عالمگیر قرار دی جانے والی مہلک ترین کوویڈ 19 کی وبا نے جہاں بڑی بڑی معیشتوں کو مالی بحران سے دوچار کیا وہیں مصر سے تعلق رکھنے والے کلب فٹبالر مہروز محمود کو بھی معاش کی خاطر گلیوں میں سامان فروخت کرنے پر مجبور کردیا۔

مہروز محمود مصر کے بنی سیف کلب کےلیے دفاعی پوزیشن میں فٹبال کھیلتے تھے جو ملک کا دوسرا بڑا کلب ہے لیکن ان فٹبال کلبوں کو بھی کرونا وائرس کی وبا نے بری طرح متاثر کردیا ہے۔

ان دنوں مہروز محمود مصر کی مصروف ترین مارکیٹ میں واقع ایک مٹھائی کی دکان میں مٹھائیاں فروخت کررہے ہیں تاکہ اس وبائی ایام کے دوران اپنے اہل خانہ کا گزر بسر چلاسکیں۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا ہے کہ مصری فٹبالر کو اپنے کلب کےلیے کھیلنے پر ماہانہ بنیادوں پر دو ڈالر ملتے تھے پھر بھی فٹبالر نے اپنے اہل خانہ کا گزربسر کرنے کےلیے جزوقتی ملازمتیں بھی کیں۔

عرب میڈیا کی رپورٹ کے مطابق وبا کے باعث مارچ کے وسط میں فٹبالر لیگ ملتوی کردی گئی تھی جس کے باعث مہروز محمود کی ماہانہ آمدن بھی آنا بند ہوگئی اور مصر کرفیو کا اس قدر سخت نفاذ ہوا کہ تمام کیفے، مالز اور دیگر دکانیں بھی بند ہوگئیں تاہم اس دوران بھی ایک بازار ایسا ہے جو لاک ڈاؤن کے دوران پوری طرح کھلا ہوا ہے اور وہاں گاہکوں کا رش بھی بہت زیادہ ہوتا ہے۔

خیال رہے کہ مصر میں کرونا وائرس کے تصدیق شدہ مریضوں کی تعداد 13 ہزار 480 ہیں جبکہ جاں بحق افراد کی تعداد 659 ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں