The news is by your side.

Advertisement

یومِ‌ وفات:‌ وراسٹائل اداکار ادیب اسکرپٹ رائٹر بھی تھے

متحدہ ہندوستان کی ریاست جموں و کشمیر کے مظفر علی کا خاندان تقسیمِ ہند سے قبل معاش کی غرض سے ممبئی منتقل ہو گیا تھا جہاں پیدا ہونے والے مظفر علی نے تعلیمی مدارج طے کرنے کے بعد اسکرپٹ رائٹر کے طور پر تھیٹر اور بعد میں فلم نگری کا رُخ کیا جہاں اداکار کے طور پر کام کیا۔

تقسیم کے بعد وہ پاکستان چلے آئے اور یہاں فلم انڈسٹری سے وابستہ ہوگئے۔ انھوں نے فلموں میں‌ اپنی اداکاری سے شائقین کی توجہ حاصل کی اور نام و مقام بنایا۔ وہ ادیب کے نام سے پہچانے گئے۔ 26 مئی 2006ء کو اداکار ادیب کی زندگی کا سفر تمام ہوا۔ وہ گردوں اور دل کے عارضے میں مبتلا تھے۔

اداکار ادیب کی فنی زندگی کا آغاز اسکرپٹ رائٹنگ سے ہوا تھا جب کہ فلم ’پاک دامن‘ میں ولن کے ایک کردار سے بڑے پردے پر ان کا نیا سفر شروع ہوا تھا۔

پاکستان کے اس مشہور اداکار کی تاریخ پیدائش 4 اکتوبر 1928ء ہے۔ ادیب کی فن کارانہ زندگی کا آغاز ایک تھیٹر کمپنی سے بطور مصنّف ہوا تھا، بعد میں انڈین نیشنل تھیٹر میں کام کیا اور دس فلموں میں‌ اداکاری کے جوہر دکھائے، 1962ء میں وہ پاکستان آگئے۔ یہاں ہدایت کار اقبال یوسف کی فلم دال میں کالا سے اپنی فنی زندگی شروع کی اور یہ سفر لگ بھگ 500 فلمیں کرنے تک جاری رہا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں