The news is by your side.

Advertisement

پاکستانی فلمی صنعت کے نگار ایوارڈ یافتہ مزاحیہ اداکار نرالا کی برسی

آج مزاحیہ اداکار نرالا کا یومِ وفات ہے جو ماضی میں‌ پاکستان کی فلم انڈسٹری کے ایک مشہور فن کار اور شائقین میں اپنی اداکاری کے سبب خاصے مقبول تھے۔ اس اداکار کو نگار ایوارڈ سے بھی نوازا گیا تھا۔

نرالا کا اصل نام سیّد مظفر حسین زیدی تھا۔ وہ 8 اگست 1937ء کو پیدا ہوئے۔ 1960ء میں انھوں نے ہدایت کار اے ایچ صدیقی کی فلم ’اور بھی غم ہیں‘ سے بڑے پردے پر بطور اداکار اپنا سفر شروع کیا۔ پاکستان کی پہلی اردو پلاٹنیم جوبلی فلم ’ارمان‘ میں نرالا نے اپنے مزاحیہ کردار کو اس طرح نبھایا کہ شائقین سے خوب داد اور ناقدین کی بھرپور توجہ حاصل کی۔ وہ اس فلم کے لیے بہترین مزاحیہ اداکار کے نگار ایوارڈ کے حق دار ٹھرے۔

اداکار نرالا کی فلموں کی تعداد سو سے زائد ہے جن میں کئی فلمیں سپرہٹ ثابت ہوئیں اور ان کی اداکاری کو ناقابلِ فراموش اور یادگار قرار دیا گیا۔ نرالا نے فلم سپیرن، مسٹر ایکس، شرارت، چھوٹی بہن، ہیرا اور پتھر، ارمان، احسان، دوراہا، زمین کا چاند، انسان اور گدھا، جہاں تم وہاں ہم، نصیب اپنا اپنا جیسی کام یاب ترین فلموں میں اپنے مزاحیہ کردار نبھا کر شائقینِ سنیما کے دل جیت لیے۔ ان کی آخری فلم چوروں کا بادشاہ تھی۔

پاکستان فلم انڈسٹری کے مشہور و معروف اداکار، نرالا نے 9 دسمبر 1990ء کو ہمیشہ کے لیے آنکھیں موند لی تھیں۔ انھیں‌ کراچی کے ایک قبرستان میں سپردِ خاک کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں