The news is by your side.

Advertisement

مشہور قوّال اور نام وَر کلاسیکی گلوکار منشی رضی الدّین کی برسی

آج پاکستان کے نام وَر کلاسیکی گائیک اور قوّال منشی رضی الدّین کی برسی ہے۔ وہ 4 جولائی 2003ء کو اس دارِ فانی سے رخصت ہوگئے تھے۔

منشی رضی الدّین کا تعلق رام پور سے تھا جہاں انھوں نے 1912ء میں آنکھ کھولی۔ ان کے آبا و اجداد فنِ گائیکی اور قوّالی کے لیے مشہور تھے۔ یہ گھرانا امیر خسرو اور بہادر شاہ ظفر کے دور میں فنِ‌ موسیقی سے وابستہ تھا۔

منشی رضی الدّین ابتدا میں نظام حیدر آباد(دکن) کے دربار سے وابستہ رہے اور بہت عزّت اور داد و انعام پایا۔ 1956ء میں وہ پاکستان آگئے اور اپنے رشتے کے بھائیوں کے ساتھ مل کر منشی رضی الدّین، منظور نیازی اور برادران کے نام سے قوّال گروپ تشکیل دیا۔

1966ء سے انھوں نے اس فن میں اپنی الگ شناخت بنانے کا فیصلہ کیا جس میں ن کے بیٹے فرید ایاز اور ابو محمد بھی شامل تھے۔

منشی رضی الدّین ہمہ جہت شخصیت تھے۔ وہ علمِ موسیقی جانتے تھے اور مشہور ہے کہ وہ شعر کا مضمون بھانپ کر اپنی قوّالیوں میں اس کی تکرار کیا کرتے تھے جس سے ان کی گائیکی میں‌ سوز پیدا ہوتا اور ان کی گائیکی پُراثر ثابت ہوتی۔ وہ ریاض کو بہت اہمیت دیتے تھے اور اپنے فن کے ساتھ مخلص تھے۔

منشی رضی الدّین کا پسندیدہ ساز تان پورہ تھا اور ان کی قوالیوں میں تان پورے کا استعمال دیکھا جاتا تھا۔ انھوں نے قوّالی کے فن میں چار دہائیوں سے زائد عرصے کے طویل سفر میں کلاسیکی انداز کو نہ صرف برقرار رکھا بلکہ بخوبی اپنی آواز میں ڈھالتے رہے۔

منشی رضی الدّین کو گائیکی اور قوّالی کے فن کے لیے خدمات کے اعتراف میں صدارتی تمغہ برائے حسنِ کارکردگی عطا کیا گیا تھا۔

کلاسیکی گائیکی کے اس نام ور فن کار کا مدفن لاہور میں ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں