The news is by your side.

Advertisement

نام وَر قوال عزیز میاں کی برسی جو صوفیائے کرام کے ارادت مند اور فلسفی بھی تھے

عزیز میاں کی وجہِ شہرت قوالی اور صوفیانہ کلام ہے جس میں‌ وہ اپنے مخصوص انداز سے سماں باندھ دیتے تھے۔ عزیز میاں 6 دسمبر 2000ء کو اس دارِ فانی سے کوچ کرگئے تھے۔ آج ان کی 21 ویں برسی منائی جارہی ہے۔

عزیز میاں کا اصل نام عبدالعزیز تھا۔ کہتے ہیں لفظ میاں ان کا تکیۂ کلام تھا جو بعد میں ان کے نام ہی کا حصّہ بن گیا۔ یوں وہ عزیز میاں مشہور ہوگئے۔

عزیز میاں عالمی شہرت یافتہ قوال تھے۔ انھوں نے علّامہ اقبال اور قتیل شفائی کی شاعری کو اپنے مخصوص طرزِ گائیکی سے سامعین میں مقبول بنایا۔ وہ پڑھنے کے لیے کلام کا انتخاب بہت سوچ سمجھ کر کرتے تھے۔ عزیز میاں نے کئی معروف اور غیر معروف شعرا کے عشقِ‌ حقیقی پر مبنی اشعار اور صوفیانہ کلام گایا۔

ان کا شمار ایسے قوالوں میں ہوتا تھا جو تعلیم یافتہ اور وسیعُ‌ المطالعہ تھے۔ انھوں نے جامعہ پنجاب لاہور سے فارسی، اردو اور عربی میں ایم اے کیا تھا۔ وہ فلسفے کا شوق رکھتے تھے اور فلسفیانہ مباحث میں حصّہ لیتے اور دلیل اور منطق کے ساتھ اپنی فکر کا اظہار کرتے۔

پاکستان ہی نہیں‌ انھیں دنیا بھر میں قوالی کی محافل سجانے کے لیے مدعو کیا جاتا تھا جہاں غیر مسلم بھی انھیں‌ سننے کے لیے جمع ہوتے۔ انھوں نے بیرونِ ملک اپنے منفرد انداز میں حمد و نعت کے ساتھ مختلف صوفیانہ کلام گایا اور حاضرین سے داد و ستائش پائی۔

عزیز میاں کی آواز نہایت بارعب اور ان کا انداز دل کش تھا۔ وہ اس فن کے شہنشاہ کہلائے۔ وہ 17 اپریل 1942ء کو دہلی میں‌ پیدا ہوئے۔ فلسفہ اور صوفی ازم ان کا محبوب موضوع رہا۔

انھوں نے قوالی کے فن اور اس کی باریکیوں کو سمجھنے کے لیے معروف استاد عبدالوحید کی شاگردی اختیار کی اور اس فن میں کمال حاصل کیا۔

‘‘اللہ ہی جانے کون بشر ہے، یا نبی یا نبیﷺ۔’’ وہ کلام تھا جو عزیز میاں کی شہرت اور مقبولیت کا سبب بنا۔ انھوں نے حمدیہ اور نعتیہ کلام کے علاوہ منقبت کو بھی اپنی آواز میں سامعین تک نہایت خوب صورتی سے پہنچایا۔

‘‘نہ کلیم کا تصور، نہ خیالِ طورِ سینا، میری آرزو محمدﷺ، میری جستجو مدینہ’’ وہ نعتیہ کلام ہے جو عزیز میاں کی آواز میں ہمیشہ نہایت عقیدت سے سنا جاتا رہے گا۔

مختصر علالت کے بعد 58 سال کی عمر میں وفات پاجانے والے عزیز میاں کی تدفین ان کی وصیت کے مطابق ملتان شہر میں ان کے مرشد کے پہلو میں کی گئی۔

عزیز میاں قوال کو 1989ء میں حسنِ کارکردگی ایوارڈ سے نوازا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں