The news is by your side.

Advertisement

کلاسیکی موسیقی اور طرزِ گائیکی کی شان اور وقار بڑھانے والے استاد سلامت علی خان کی برسی

پاکستان کے نام وَر کلاسیکی موسیقار اور گلوکار استاد سلامت علی خان 2001ء میں آج ہی کے دن اس دارِ فانی کو ہمیشہ کے لیے چھوڑ گئے تھے۔ انھیں اپنے کمالِ فن کی بدولت کم عمری ہی میں ہندوستان گیر شہرت حاصل ہوئی۔

استاد سلامت علی خان 12 دسمبر 1934ء کو شام چوراسی، ضلع ہوشیار پور میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے اپنے بڑے بھائی استاد نزاکت علی خان کے ساتھ اپنے والد استاد ولایت علی خان سے موسیقی کی تربیت حاصل کی۔ ان کے فن اور اندازِ‌ گائیکی نے کم عمری میں‌ انھیں‌ ہندوستان بھر میں‌ پہچان عطا کردی تھی۔ قیامِ پاکستان کے بعد سلامت علی خان نے ملتان ہجرت کی اور بعد میں لاہور کو اپنا مستقر بنایا۔

استاد سلامت علی خان کا گھرانہ دھرپد گائیکی کے لیے مشہور تھا لیکن استاد سلامت علی خان نے خیال گائیکی میں اختصاص کیا۔ 1983ء میں ان کے بڑے بھائی استاد نزاکت علی خان وفات پاگئے اور استاد سلامت علی خان نے بھی گائیکی کے حوالے سے خود کو محدود کرلیا تھا۔ پاک و ہند میں کلاسیکی موسیقی کی شان اور اس کا وقار بڑھانے والے سلامت علی خان کو پنج پٹیہ گلوکار کے لقب سے بھی نوازا گیا۔ استاد سلامت علی نے کلاسیکی گائیکی کی مختلف جہتوں میں کامیاب تجربات کرکے خود کو یکتا ثابت کر دیا

پاکستان میں‌ فنِ موسیقی اور گائیکی میں باکمال اور استاد کا مرتبہ حاصل کرنے والے سلامت علی خان کو لاہور کے قبرستان میں‌ سپردِ خاک کیا گیا۔

حکومتِ‌ پاکستان کی جانب سے استاد سلامت علی خان کو دو مرتبہ صدارتی تمغہ برائے حسنِ‌ کارکردگی اور ستارۂ امتیاز عطا کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں