The news is by your side.

Advertisement

یو اے ای: ملازمین کے حق میں بڑا فیصلہ

دبئی: متحدہ عرب امارات میں تنخواہوں کی ادائیگی میں تاخیر کرنے پر جرمانوں کا اعلان کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کی وزارت انسانی وسائل اور ایمریٹائزیشن موہری نے حکم جاری کیا ہے کہ وہ آجر جو تنخواہیں تاخیر سے ادا کرتے ہیں، جرمانوں کا سامنا کریں گے۔

آجروں کو تنخواہوں کی عدم ادائیگی کی صورت میں تیسرے اور دسویں دن یاددہانی کا نوٹس بھیجا جائے گا اور تنخواہوں کی بروقت ادائیگی میں ناکامی کی صورت میں ان پر جرمانہ ہوگا، جس کے لیے طریقہ کار وضع کر دیا گیا ہے۔

وہ آجر جن کی کمپنی میں 50 یا اس سے زائد ملازمین کام کرتے ہیں، ان کو وزارت کی جانب سے معائنوں کا سامنا ہوگا، اور ان کو انتباہ جاری کیا جائے گا اگر 17 دن گزر جانے کے باوجود تنخواہیں ادا نہ کی گئی ہو۔

الرواد ایڈووکیٹس کے ڈاکٹر حسن الہیس کے مطابق متحدہ عرب امارات میں 2009 سے اجرت کے تحفظ کا نظام فعال ہے، تاہم نئی قرارداد میں تنخواہوں کی عدم ادائیگی کے خلاف سخت اقدامات کو نافذ کرنے کی کوشش کی گئی ہے، تاکہ بہتر تعمیل کو یقینی بنایا جا سکے۔

انھوں نے کہا ملازمت کے معاہدے میں کسی وضاحت سے ہٹ کر اگر مقررہ تاریخ سے 15 دنوں کے اندر ملازمین کو اجرت ادا نہیں کی گئی تو آجر کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

اجرت کے نظام کے مطابق ملازم کی تنخواہ رجسٹرڈ ہونے کے ایک مہینے بعد پہلے دن سے شروع ہوتی ہے، اگر معاہدے میں مقررہ تاریخ کا تذکرہ نہیں کیا گیا ہے کہ تو ملازمین کو ماہ میں کم از کم ایک بار ان کی اجرت موصول ہونی چاہیے۔

وزارت کی جانب سے جاری ہدایات میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ وقت پر تنخواہوں کی ادائیگی سے کاروباری استحکام اور ملازمین کی زندگی آسان ہو جاتی ہے، کام کی جگہ پر بھی مثبت اثر پڑتا ہے اور ملازمین کی کارکردگی بہتر ہو جاتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں