The news is by your side.

Advertisement

فواد چوہدری اور صحافی مطیع اللہ جان کے درمیان تلخ جملوں‌ کا تبادلہ

فواد چوہدری کی میڈیا سے گفتگو کے دوران بدنظمی ہوئی صحافی مطیع اللہ جان اور اور پی ٹی آئی رہنما کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ بھی ہوا۔

پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کررہے تھے کہ صحافی مطیع اللہ جان کی جانب سے ان کی گفتگو کے دوران مداخلت سے ماحول گرم ہوگیا۔ بدنظمی کے دوران دونوں کے درمیان تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا۔ پی ایف یو جے نے مطیع اللہ کے رویے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی صحافی کو حق نہیں دینگے کہ وہ کسی جماعت کا آلہ کار بنیں۔

واقعہ یہ ہے کہ پی ٹی آئی رہنما اسد عمر کی میڈیا سے گفتگو کے بعد فواد چوہدری میڈیا سے گفتگو کیلیے جیسے ہی ڈائس پر آئے تو صحافی مطیع اللہ جان نے ان کی بات شروع ہوتے ہی سوال کردیا۔ اس دوران فواد چوہدری نے کہا کہ پہلے مجھے بات مکمل کرنے دیں آپ کی بات کا جواب بھی دونگا لیکن مطیع اللہ خاموش نہ ہوئے اور اپنے سوال کا جواب دینے پر اصرار کرتے رہے۔

اس موقع پر دونوں کے درمیان کافی دیر تلخ جملوں کا تبادلہ ہوا، فواد چوہدری کی میڈیا سے گفتگو نہ رکنے پر مطیع اللہ نے ڈائس پر رکھے میڈیا چینلز کے مائیک وہاں سے ہٹا کر زمین پر رکھ دیے اور ڈائس کے سامنے کھڑے ہوگئے اس دوران دونوں کے درمیان تکرار ہوتی رہی اور معافی کے مطالبے بھی کیے جاتے رہے۔

 

جھگڑا بڑھنے پر دونوں جانب سےکچھ لوگوں نے معاملہ رفع دفع کرنے کی کوشش کی، اسد عمر نے کہا کہ ہمیشہ پہلے بات مکمل ہوتی ہے اسکےبعد سوال جواب ہوتے ہیں۔ جب کہ دیگر صحافی بھی مطیع کو سمجھانے کی کوشش کرتے رہے لیکن معاملہ گرم رہنے پر وہاں موجود دیگر پی ٹی آئی رہنما اندر چلے گئے جب کہ مطیع اللہ ڈائس کے سامنے کھڑے مسلسل بولتے رہے۔

مذکورہ صورتحال پر سیکریٹری جنرل پی ایف یو جے رانا عظیم نے بھی صحافی مطیع اللہ جان کے رویے کی مذمت کی ہے۔

اے آر وائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا رانا عظیم نے کہا کہ مطیع اللہ جان نے جو کیا وہ دیکھا اورسنا واقعہ انتہائی افسوسناک ہے، صحافی کا کام کسی کا مائیک چھیننا یا گالی دینا نہیں ہوتا، ہم کسی صحافی کو حق نہیں دینگے کہ وہ کسی جماعت کا آلہ کار بنے۔

سیکریٹری جنرل پی ایف یو جے نے مزید کہا کہ یہی مطیع اللہ جان تھے جو صحافیوں کیخلاف پروگرام کرتے تھے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں