The news is by your side.

Advertisement

اگر انسان زمین سے غائب ہوجائیں تو کیا ہوگا؟

عظیم اور قوی الجثہ جانوروں کی معدومی کے بارے میں سنتے اور پڑھتے ہوئے کیا آپ کو کبھی یہ خیال آیا ہے کہ ہم انسان بھی معدوم ہوسکتے ہیں؟

یقیناً یہ خیال ہمیں کبھی نہیں آیا، کیونکہ ہم زمین کو اپنی ملکیت سمجھتے ہیں اور ہمیں لگتا ہے کہ سب کچھ ختم ہوسکتا ہے لیکن انسان نہیں، اور اگر انسان ختم ہوگیا تو یہ اس زمین کا بھی آخری دن ہوگا۔

تو پھر آئیں آج اس غلط فہمی کو دور کرلیتے ہیں۔

اگر کبھی ایسا ہو، کہ زمین پر موجود تمام انسان اچانک غائب ہوجائیں اور ایک بھی انسان باقی نہ رہے تو سب سے پہلے زمین کو جلاتی برقی روشنیاں بجھ جائیں گی اور زمین کا زیادہ تر حصہ اندھیرے میں ڈوب جائے گا۔

اس کے ساتھ ہی سینکڑوں سالوں میں تعمیر کی گئی ہماری یہ بلند و بالا دنیا آہستہ آہستہ تباہی کی طرف بڑھنا شروع ہوجائے گی۔

مزید پڑھیں: قیامت کے آنے میں کتنے سال باقی

امریکی شہر نیویارک کا سب وے اسٹیشن انسانوں کے خاتمے کے بعد صرف 2 دن قائم رہے گا، اس کے بعد یہ زیر آب آجائے گا۔

انسانوں کے قائم کیے گئے ایٹمی و جوہری بجلی گھروں کو ٹھنڈا رکھنے والے جنریٹرز بند ہوجائیں گے جس کے بعد تمام بجلی گھروں میں آگ بھڑک اٹھے گی اور آہستہ آہستہ یہ پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لے گی۔

تپش اور تابکاری کا یہ طوفان کم از کم چند ہزار سال تک زمین کو اپنے گھیرے میں لیے رہے گا جس کے بعد آہستہ آہستہ زمین سرد ہونا شروع ہوجائے گی۔

اس دوران گھر اور عمارتیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوجائیں گی اور ان پر خود رو پودے اور بیلیں اگ آئیں گی۔

پھل اور پھول اپنی پہلے والی جنگلی ساخت پر واپس آجائیں گے جنہیں انسان مصنوعی طریقوں سے مزیدار اور خوش رنگ بنا چکے ہیں۔

انسانوں کے ختم ہوتے ہی جنگلی حیات کی آبادی میں اضافہ ہونا شروع ہوجائے گا۔

مزید پڑھیں: زمین پر آباد جانور کب سے یہاں موجود ہیں؟

ہمارے خاتمے کے 300 سال بعد بڑے بڑے پل ٹوٹ جائیں گے۔

سمندر کنارے آباد شہر ڈوب کر سمندر ہی کا حصہ بن جائیں گے۔

بڑے بڑے شہروں میں درخت اگ آئیں گے اور صرف 500 سال بعد ہمارے بنائے ہوئے شہروں کی جگہ جنگل موجود ہوں گے۔

صرف ایک لاکھ سال کے بعد زمین کا درجہ حرارت اس سطح پر آجائے گا جو انسانوں سے قبل ہوا کرتا تھا، نہ تو اس میں زہریلی گیسیں شامل ہوں گی اور نہ ہی گاڑیوں اور فیکٹریوں کا آلودہ دھواں۔

گویا ہماری زمین ہمارے ختم ہوجانے کے بعد بھی قائم رہے گی، یعنی زمین کو ہماری کوئی ضروت نہیں۔ البتہ ہمیں زمین کی اشد ضرورت ہے کیونکہ ہمارے پاس اس کے علاوہ رہنے کو اور کوئی گھر موجود نہیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں