این ا ے 131، ریٹرننگ افسر نے عمران خان کو کل ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا -
The news is by your side.

Advertisement

این ا ے 131، ریٹرننگ افسر نے عمران خان کو کل ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا

لاہور: این اے 131، ریٹرننگ افسر نے عمران خان کو کل ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا، عمران خان کے کاغذات میں تنخواہ، پنشن، زرعی آدمنی کے ذکر پر وضاحت طلب کی گئی۔

تفصیلات کے مطابق این اے 131 میں عمران خان کے کاغذات پر اعتراضات پر سماعت ہوئی، عمران خان کے وکیل بابر اعوان اور اعتراض کنندہ آر او کے سامنے پیش ہوئے، ریٹرننگ افسر نے عمران خان کو کل ذاتی حیثیت میں طلب کرلیا۔

وکیل بابر اعوان نے کہا کہ عمران خان میانوالی، اسلام آباد، بنوں میں مصروف ہیں، عمران خان ذاتی حیثیت میں پیش نہیں ہوسکتے، میں نمائندگی کررہا ہوں۔

آراو نے استفسار کیا کہ عمران خان کے ٹیکس ادائیگی کی رقم کاغذات، ایف بی آر رپورٹ میں فرق ہے جبکہ تنخواہ دار ہونے کی وضاحت کے لیے آر او نے بابر اعوام کو وقت دے دیا۔

قبل ازیں پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان کے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 53 کے لیے جمع کرائے گئے کاغذاتِ نامزدگی کی جانچ پڑتال شروع ہوگئی ، ایڈوکیٹ رائے تجمل نے الیکشن کمیشن کے اعتراضات کو رد کردیا۔

 عمران خان کے کاغذاتِ نامزدگی کی جانچ کے موقع پر بابر اعوان از خود ریٹر ننگ آفیسر کے سامنے پیش نہیں ہوئے بلکہ ان کے معاون رائے تجمل عمران خان کی دستاویزات سمیت پیش ہوئے، بابراعوان لاہورمیں ہونےکی وجہ سےپیش نہیں ہوسکے۔

انہوں نے ریٹرننگ آفیسر سے درخواست کی کہ جانچ پڑتال کے عمل کو مکمل طور پر سنا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ جواعتراضات لگائےگئےہیں وہ نئےنہیں ہیں گزشتہ انتخابات میں بھی عمران خان پریہی الزام لگایاگیاتھا۔ انہوں نے ریٹرننگ آفیسر کے روبرو بتایا کہ گزشتہ ریٹرننگ افسرکےفیصلےکی کاپی بھی ہمارے پاس موجودہے۔

انہوں نے اس موقع پر دلیل دی کہ جس مسئلےپر ایک بار آراوحکم سنادیتےہیں ، اسے تکنیکی طور پر دوبارہ کسی آر او کی جانب سے نہیں اٹھایاجاسکتا۔

خیال رہے کہ حلقہ این اے 53 سے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی بھی امید وار ہیں اور ان کے کاغذاتِ نامزدگی کی جانچ پڑتال بھی آج ہی ہوگی جبکہ عائشہ گلالئی کو بھی الیکشن کمیشن نے آج ہی طلب کررکھا ہے ۔

مذکورہ حلقے سے چوہدری نثار علی خان نے بطور امیدوار اپنے کاغذاتِ نامزدگی جمع کرائے تھے اور الیکشن میں حصہ لینے کا اعلان کیا تھا ، تاہم گزشتہ روز انہوں نے تحریکِ انصاف کے ساتھ سیٹ ایڈجسٹمنٹ کرلی اوراس حلقے سے دست بردار ہوگئے۔

عام انتخابات 2018 کے لیے اب تک 10 ہزار سے زائد امید واروں کی جانچ پڑتال مکمل کی جاچکی ہے۔ جس میں سے 2300سےزائدامیدوارمختلف اداروں کےنادہندہ نکلے ہیں جبکہ 122امیدواردہری شہریت کےحامل تھے جس کے سبب ان کے کاغذات رد کردیے گئے ہیں۔

عام انتخابات کے لیے قومی وصوبائی اسمبلیوں کے لیے 19 ہزار پانچ سو افراد کی جانب سے کاغذات ِامزدگی جمع کرائے گئے ۔ کاغذات کی جانچ پڑتال کے لیےامیدواروں کاڈیٹامتعلقہ اداروں کوفراہم کیا گیا اور وہاں سے حاصل ہونے والی معلومات کی روشنی میں کاغذات کی جانچ پڑتا ل کی جارہی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں