The news is by your side.

Advertisement

تحریک انصاف کی پی پی 7 میں دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد

اسلام آباد : الیکشن کمیشن نے پی پی 7میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد کردی ، پی ٹی آئی امیدوار نے پی پی 7 کے 21 پولنگ اسٹیشنز پر دوبارہ گنتی کی درخواست کی تھی۔

تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن نے تحریک انصاف کی پی پی سات میں دوبارہ گنتی کی درخواست پر محفوظ فیصلہ سنا دیا اور پی پی سات میں دوبارہ گنتی کی درخواست مسترد کر دی۔

چیف الیکشن کمشنر نے مختصر فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ درخواست گزار کوئی دھاندلی اور بے قاعدگی ثابت نہیں کر سکا اور نہ ہی بے ضابطگی کا کوئی جواز ثابت کر سکا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی وجوہات بتانے میں بھی درخواست گزار ناکام رہا اس لیے در خواست مسترد کی جاتی ہے درخواست گزار دوبارہ گنتی کے لئے خاطر خواہ ثبوت فراہم نہیں کر سکا۔

الیکشن کمیشن نے آج ہی کیس پر سماعت کی تھی اور سماعت مکمل ہونے بعد فیصلہ محفوظ کیا تھا۔

الیکشن کمیشن میں پی پی 7 میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی درخواست پر سماعت میں ن لیگ کے امیدوار راجہ صغیر اور پی ٹی آئی امیدوار شبیر اعوان الیکشن کمیشن کے سامنے پیش ہوئے۔

آر او پی پی 7 بھی الیکشن کمیشن کے سامنے پیش ہوئے، پی ٹی آئی کے امیدوارشبیراعوان کے وکیل نے موقف میں کہا کہ غیرقانونی طور پر آر او نے ہماری درخواست مسترد کی۔

جس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ ہائی کورٹ حکم کے بعد آپ کی درخواست الیکشن کمیشن میں نہیں آئی، آپ محض الزامات لگا رہے ہیں۔

چیف الیکشن کمشنر نے آراینڈآئی کے ذمہ دارکوطلب کیا ، پی ٹی آئی کے وکیل نے درخواست الیکشن کمیشن میں جمع کرائی، آر اینڈآئی کے ذمہ دار نے بیان میں کہا کہ 10 منٹ بعد یہ درخواست واپس لے لی گئی۔

چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ ہم نےہائیکورٹ کا آرڈر بھی پڑھا ہے، تحریک انصاف کی شام 5بجےتک کوئی درخواست نہیں آئی، آپ نے درخواست آر اینڈ آئی میں جمع کرائی اور 10 منٹ بعد واپس لے لی، آپ نے درخواست تاخیر سے جمع کرائی اورواپس لی، پھرآپ الیکشن کمیشن پر الزامات بھی لگاتے ہیں۔

الیکشن کمیشن میں آر اینڈ آئی برانچ کے حکام پیش ہوئے، آر اینڈ آئی برانچ نے بتایا کہ ساڑھے 5بجےدرخواست جمع کرائی گئی۔

چیف الیکشن کمشنر نے آر اینڈ آئی برانچ حکام کو ہدایت کی کہ آپ تحریری بیان لکھ کر دیں۔

وکیل تحریک انصاف نے کہا کہ ہم لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے پر یہاں آئے ہیں، جس پر چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ تمام معاملات کلیئر ہونے چاہیے، آپ کی درخواست الیکشن کمیشن میں نہیں ہے۔

چیف الیکشن کمشنر نے مزیدکہا کہ الیکشن میں آر ٹی ایس سسٹم کسی ضمنی انتخاب میں استعمال ہی نہیں ہوا، آپ نے لکھا آر ٹی ایس سسٹم ضمنی انتخاب میں استعمال ہوا، جس پر وکیل شبیر اعوان کا کہنا تھا کہ آر ٹی ایس سسٹم بیٹھ گیا تھا۔

چیف الیکشن کمشنر نے پی ٹی آئی کے وکیل سے مکالمے میں کہا آپ نے آر ٹی ایس سسٹم کا ذکر کیا، الیکشن میں یہ سسٹم استعمال ہی نہیں ہوا، میں نے آر ٹی ایس اور آر ایم ایس کا فرق بتایا ہے۔

پی پی 7 راولپنڈی دوبارہ گنتی کیس میں وکیل تحریک انصاف نے کہا کہ جیت کا مارجن بہت کم، اسی لیے دوبارہ گنتی کی درخواست دی ، قانون کےمطابق جیت کا مارجن 5 فیصدسےکم ہوتو دوبارہ گنتی ہو سکتی ہے۔

دوران سماعت ن لیگ کے امیدوارراجہ صغیر وکیل نے دلائل میں کہا کہ ان کی درخواست بے بنیاد ہے،کئی بار انہوں نے وقت لیا، آر او کے سامنے بھی یہ ثابت نہیں کر سکے کہ کہاں غلطی ہوئی، پہلے انہوں نے پورے حلقے کی بات کی ، اب 21 پولنگ اسٹیشنز پر ری پول کا مطالبہ کر رہے ہیں، ان کا مؤقف تبدیل ہوتا رہتا ہے۔

وکیل ن لیگ امیدوار کا کہنا تھا کہ درخواست کی کوئی ایک بنیاد ہونی چاہیے، انہوں نے آر ٹی ایس کے بیٹھ جانے کا کہا، پہلے ایک درخواست دی پھر دوسری اور اب رٹ پٹیشن دائر کی گئی ، یہ نہیں بتا سکے کہ کس پولنگ اسٹیشن پر معاملہ خراب ہوا، انہوں نے انتخابی عمل میں حصہ لیااب یہ ہار گئے ہیں۔

وکیل نے مزید کہا کہ انہوں نے درخواست پہلے نہیں دی، ان کے تمام الزامات بے بنیاد ہیں، تمام حلقوں کےبعداب کیوں یہ 21پولنگ اسٹیشنز پر آئے، اس کی کوئی مناسب وجہ بھی نہیں بتا سکے۔

وکیل شبیراعوان نے جواب الجواب دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے قانونی تقاضے پورے کر کے درخواست جمع کرائی، آر او کے پاس ری کاؤنٹنگ کا اختیار ہے، آر او نے درخواست مسترد کی، یہ بھی نہیں پوچھا درخواست کیوں دائر کی۔

پی ٹی آئی وکیل کا کہنا تھا کہ آراوکےکنڈکٹ سےمتعلق الیکشن کمیشن کوبتارہاہوں، مجھےسنےبغیراورغیرموجودگی میں درخواست خارج کردی جاتی ہے، آر او کے درخواست خارج کرنے کے پیچھے کچھ ہے۔

شبیراعوان نے مزید بتایا کہ ہم نے آر او سے رابطہ کیا، پہلے بتایا ساڑھے 4 بجے فیصلہ سنائیں گے، پھر کہا ساڑھے 6 بجے فیصلہ سنائیں گے اور بعد میں آر او نے ہماری درخواست مستردکرنےکافیصلہ سنایا۔

یاد رہے پی ٹی آئی امیدوار نے پی پی 7 کے 21 پولنگ اسٹیشنزپردوبارہ گنتی کی درخواست کی تھی ، لیگی امیدوارپی پی 7 میں 49 ووٹوں سے جیتا تھا۔

بعد ازاں پی پی 7کےالیکشن میں 1516ووٹ ریٹرننگ افسر نے مسترد کیے تھے اور آراوکےفیصلےکیخلاف امیدوارشبیراعوان نےہائیکورٹ سے رجوع کیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں