spot_img

تازہ ترین

ایاز صادق قومی اسمبلی کے اسپیکر منتخب

مسلم لیگ ن کے سردار ایاز صدیق قومی اسمبلی...

کمالیہ: بارش میں گھر کی چھت گر گئی، ماں باپ اور بیٹا جاں بحق

کمالیہ کے علاقے فاضل دیوان میں مسلسل اور تیز...

حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں اضافہ کردیا

نگراں حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 4 روپے...

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے پر امریکا نے صاف انکار کر دیا

پاکستان ایران گیس پائپ لائن منصوبے پر امریکا نے...

بلاول وزیراعظم نہیں بنتے تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔، پی پی رہنما نے کیا کہا؟

عام انتخابات کے بعد حکومت سازی کیلیے پی پی اور ن لیگ میں مذاکرات جاری ہیں ایسے میں پی پی کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات فیصل کریم کنڈی کا اہم بیان سامنے آیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق 8 فروری کو ہونے والے عام انتخابات میں کوئی بھی سیاسی جماعت تنہا حکومت بنانے کے لیے سادہ اکثریت حاصل نہیں کر سکی ہے جس کے بعد سیاسی جماعتوں میں حکومت سازی کیلیے مذاکرات، ملاقاتوں اور  جوڑ توڑ کا سلسلہ جاری ہے۔

وفاق اور صوبوں میں حکومتوں کے قیام کے لیے ن لیگ اور پیپلز پارٹی میں بھی مذاکرات کے کئی دور ہو چکے ہیں تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ معاملہ وزارت عظمیٰ پر اٹکا ہوا ہے۔ ن لیگ اپنا وزیراعظم لانا چاہتی ہے اور پی پی کو تعاون کے عوض بڑے عہدوں کی پیشکش کی ہے جب کہ پیپلز پارٹی کا کہنا ہے کہ اس نے وزیراعظم کے لیے بلاول بھٹو کو نامزد کیا ہوا ہے۔

اسی حوالے سے پیپلز پارٹی کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات فیصل کریم کنڈی کا اہم بیان سامنے آیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ اگر بلاول بھٹو وزیراعظم نہیں بنتے تو میرے خیال میں پیپلز پارٹی کو اپوزیشن میں بیٹھنا چاہیے۔

فیصل کریم نے کہا کہ حکومت میں اگر پی ڈی ایم پارٹ 2 آتی ہے میرے خیال میں معاملات اچھے طریقے سے نہیں چل سکتے۔

پی پی رہنما کا کہنا تھا کہ اگلی حکومت بہت مسائل کا شکار ہوگی اور اس کے پاس اکثریت بھی نہیں ہو گی۔ یہ بھی ہوسکتا ہے کہ ہم ن لیگ کا وزیراعظم بنائیں لیکن خود اپوزیشن میں بیٹھیں۔

Comments

- Advertisement -