The news is by your side.

Advertisement

ہشام اوّل کے خلاف سلیمان کی بغاوت: امارتِ قرطبہ کا ایک ورق

مؤرخین نے ہشام اوّل کو نرم دل، رعایا پرور اور نیک و عبادت گزار حکم راں لکھا ہے جو بہترین نظم و نسق اور اپنے حسنِ سلوک کی وجہ سے بھی مشہور ہے۔ وہ امارتِ قرطبہ کے بانی اور پہلے حکم ران عبدالرّحمٰن الداخل کا بیٹا تھا جو اپنے والد کی وفات کے بعد تخت پر بیٹھا۔

ہشام بن عبدالرحمٰن الداخل کا سنِ پیدائش 26 اپریل 757ء بتایا جاتا ہے جس کی زندگی کا سفر آج ہی کے دن 796ء میں ہمیشہ کے لیے تمام ہو گیا تھا۔ تاریخ کے اوراق بتاتے ہیں‌ کہ وہ امارتِ قرطبہ کے دوسرے حکم ران کی حیثیت سے 788ء میں تخت پر بیٹھا تھا۔ ہشام ایک علم پرور، ادب دوست خلیفہ ہی مشہور نہیں بلکہ اپنے محاسن و اخلاق کی بنا پر عوام میں‌ بھی مقبول رہا۔

وہ قرطبہ میں پیدا ہوا تھا۔ ہشّام کی کنیت ابوالولید تھی۔ اسے عبدالرحمٰن الدّاخل نے اپنی زندگی میں ہی اپنا ولی عہد مقرر کر کے بطور جانشین اس کے نام کا اعلان کر دیا تھا۔ ہشّام کے بھائی سلیمان کو والد کا یہ فیصلہ سخت گراں‌ گزرا تھا، لیکن مجال نہ تھی کہ اختلاف کرتا۔

مؤرخین اس سے متعلق ایک واقعہ پیش کرتے ہیں جو کچھ یوں ہے: ایک مرتبہ عبدالرحمٰن الدّاخل نے اپنے ان دونوں بیٹوں کی ذہانت اور قابلیت کی آزمائش کے لیے انھیں‌ اشعار سنا کر شاعر کا نام پوچھا۔ ہشام نے شعر سن کر بتایا کہ اس کا حافظہ کہتا ہے یہ اشعار امرؤ القیس کے ہیں اور میرا گمان ہے کہ یہ اشعار اس نے ہمارے امیر ہی کی شان میں کہے ہیں۔ عبدالرحمٰن نے اسے سراہا اور اس کا جواب قبول کیا اور پھر دوسرے اشعار سلیمان کے سامنے پڑھے مگر اُس نے کہا کہ مجھے عربوں کے اشعار یاد کرنے کی فرصت نہیں، کیوں کہ مجھے اس سے زیادہ دوسرے ضروری کام کرنے ہوتے ہیں۔ عبدالرحمٰن یہ سن کر خاموش ہو گیا۔ یہ واقعہ احمد محمد المقری کی مشہور تصنیف میں موجود ہے۔

788ء میں عبدالرحمٰن الدّاخل کا انتقال ہو گیا۔ ابن خلدون نے لکھا ہے کہ: ’’جس وقت عبدالرحمٰن نے سفرِ آخرت اختیار کیا تو اُس وقت اُس کا بڑا بیٹا سلیمان طلیطلہ میں حکم رانی کر رہا تھا اور اُس کا دوسرا بیٹا ہشام ماردہ کا انتظام سنبھالے ہوئے تھا۔ عبدالرحمٰن نے اِسی کو اپنا ولی عہد بنایا تھا۔ تیسرا بیٹا عبد اللہ مسکین وفات کے وقت قرطبہ میں موجود تھا۔ اپنے باپ کے مرنے پر اپنے بھائی ہشام کی حکومت کی بیعت کر لی اور اُس کو خبر پہنچائی۔ چنانچہ ہشام ماروہ سے قرطبہ آیا اور حکم رانی کی عبا پہن کر حکم رانی کرنے لگا۔

ہشام کی حکومت قائم ہوتے ہی اُس کے بڑے بھائی سلیمان نے بغاوت کر دی اور اپنے ہمراہ طلیطلہ کے باشندوں سمیت جنگ پر اتر آیا۔ ہشام کا چھوٹا بھائی عبد اللہ بھی پسِ پردہ سلیمان سے جا ملا اور محض غائبانہ بیعت کی آڑ میں موقع پاکر قرطبہ سے فرار ہو گیا اور سلیمان کے پاس پہنچ کر بغاوت کے منصوبے میں اُس کا شریکِ کار ہو گیا۔ ہشام نے دونوں کو پیش قدمی کرنے کا موقع نہ دِیا خود فوج لے کر روانہ ہو گیا۔ طلیطلہ شہر کا محاصرہ کرتے ہوئے وہاں مقابلہ نہ کرنے کا سوچا۔ طلیطلہ کے محاصرے کو دو مہینے گزر گئے مگر مقابلے کے لیے سلیمان کی کوئی سپاہ نہ نکلی اور ہشام واپس قرطبہ آگیا۔ عبد اللہ نے جب دیکھا کہ ہشام کی فتح مندی عروج پر ہے تو وہ سلیمان کو چھوڑ کر تمرد چلا گیا اور ہشام پر بھروسا کرتے ہوئے بغیر امان طلب کیے بغیر کسی اطلاع کے قرطبہ میں آگیا جہاں ہشام اُس سے حسنِ سلوک سے پیش آیا۔ چند روز بعد سلیمان نے مصالحت کرنی بہتر سمجھی اور ہشام نے اُسے اپنے خاندان سمیت اندلس سے چلے جانے کی اجازت دے دی۔ جہاں سے وہ مراکش میں بربر قبائل کے ساتھ سکونت پر آمادہ ہو گیا اور یوں جنگ کا خاتمہ ہو گیا۔

ہشام نے محض 39 سال کی عمر میں قرطبہ میں وفات پائی۔ اس نے اپنے بیٹے الحکم بن ہشام کو اپنا جانشین مقرر کیا تھا۔ ہشام کی تدفین قصرِ قرطبہ میں‌ کی گئی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں