The news is by your side.

Advertisement

فیس ماسک نے لوگوں کو ایک اور بیماری سے بچا لیا

کورونا وائرس کی عالمی وبا نے دنیا بھر کے لوگوں کو خوف میں مبتلا کر رکھا ہے، اس جان لیوا بیماری سے بچنے کیلئے حکومتی سطح پر شہریوں کو احتیاطی تدابیر پر سختی سے عمل درآمد بھی کروایا جارہا ہے۔

ان احتیاطی تدابیر میں فیس ماسک پہننا، سماجی فاصلہ اور سینیٹائزر کے استعمال سمیت دیگر ہدایات جاری کی گئی ہیں جن پر عوام کی بڑی تعداد عمل پیر ابھی ہے۔

مذکورہ احتیاطی تدابیر ہر شخص کو کورونا وائرس سے کافی حد تک تو محفوظ رکھتی ہی ہیں ساتھ ساتھ ان پر عمل درآمد سے  انسان دیگر بیماریوں سے بھی محفوظ رہتا ہے۔

اس حوالے سے ایک رپورٹ کے مطابق شہریوں میں فیس ماسک کے استعمال سے ٹی بی کے مریضوں کی تعداد میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

بھارت میں تپ دق کے علاج کے محکمے نے مریضوں کے اعداد و شمار جاری کیے ہیں جس کے مطابق ان کا کہنا ہے کہ ٹی بی کے مریضوں کی تعداد میں ایک سال کے دوران تقریباً نو ہزار کی کمی واقع ہوئی ہے۔

بھارت کے پریاگ راج ضلع تپ دق کے محکمہ کے اعداد و شمار کے مطابق جہاں سال2020میں11610 نئے افراد کی شناخت کی گئی تھی وہیں2021 میں صرف 3059 نئے مریض پائے گئے ہیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق چیف میڈیکل افسر نے بتایا کہ تپ دق کی بیماری کے بارے میں لوگوں میں بیداری پیدا ہوگئی ہے۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ وسیع پیمانے پر استعمال ہونے والے فیس ماسک نے تپ دق اور انسانوں کے درمیان رکاوٹ پیدا کرکے لوگوں کو ٹی بی جیسے موذی مرض سے  بچانے کا کام کیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں