The news is by your side.

کرونا سے مرنے والے کی لاش کے ساتھ ڈیڑھ برس تک اہل خانہ کی رہائش

کانپور: بھارت میں ایک خاندان نے کرونا وائرس سے مرنے والے شخص کی لاش کو ڈیڑھ سال تک گھر ہی میں رکھا، اور آخری رسومات ادا نہیں کیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق کمشنریٹ پولیس نے جمعہ کو کرشنا پوری میں ایک گھر سے 35 سالہ انکم ٹیکس اہل کار وملیش کی لاش برآمد کی، جس کی موت موت تقریباً 18 ماہ قبل کرونا وائرس سے ہوئی تھی۔

اسپتال کی جانب سے اہل خانہ کو وملیش کی موت کا سرٹیفکیٹ بھی جاری کیا گیا تھا، لیکن اس کے اہل خانہ اس امید کے ساتھ اس کی لاش کے ساتھ رہ رہے تھے کہ وہ مرا نہیں ہے اور ایک دن جی اٹھے گا۔

پولیس کے مطابق وملیش احمد آباد، گجرات میں آئی ٹی ڈیپارٹمنٹ میں ملازم تھا، اور رہائش کانپور میں تھی، اور وہ 22 اپریل 2021 کو کرونا وائرس کی وجہ سے مر گیا تھا۔

رپورٹس کے مطابق وملیش سنکار کو خاندان والوں نے مقامی اسپتال میں داخل کروایا، جہاں وہ تیسرے روز چل بسا، لیکن لواحقین اسے مردہ ماننے کو تیار نہ تھے اور بجائے اس کے وہ اس کی آخری رسومات ادا کرتے، مردہ جسم کو گھر لے گئے اور اس کی دیکھ بھال کرتے رہے کہ وہ کسی بھی وقت اٹھ بیٹھے گا۔

چند روز قبل جب اس کے دفتر والوں نے یہ جاننے کے لیے کہ مذکورہ بالا شخص کافی عرصے سے غیر حاضر ہے اس کی تلاش شروع کی تو انھیں اس کے گھر سے اس کی حنوط شدہ لاش مل گئی۔

لواحقین نے کملیش کی موت کے بعد متعدد کلینکس اور اسپتالوں میں اسے لے جا کر رائے لی، لیکن ہر جگہ سے موت ہی کی تصدیق کی گئی۔ جس پر وہ لاش گھر لے آئے اور آکسیجن سلنڈر لگا کر محلے والوں کو بتایا کہ یہ کومہ میں ہے۔

ڈیڑھ برس تک اس کی بیوی، والدین، بہن بھائی اور دیگر افراد گھر میں لاش کے ساتھ رہے، اس دوران وہ اس کا روز لباس تبدیل کرتے اور ڈیٹول اور دیگر ڈس انفیکٹنٹ سے مردہ جسم کو صاف کرتے رہے، جب کہ ایئرکنڈیشن کو 24 گھنٹے چلاتے رہے، لیکن اس سب کچھ کے باوجود لاش خراب ہونا شروع ہو گئی تھی۔

پولیس حکام کے مطابق لاش تحویل میں لے کر اس کی آخری رسومات ادا کر دی گئی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں