The news is by your side.

Advertisement

کسی وزیرکوتبدیل نہیں کیاجا رہا، تبدیلی کا اختیار صرف وزیراعظم کے پاس ہے، فواد چوہدری

وزیراس لیےوزیرہیں کیونکہ وزیراعظم ان سےمطمئن ہیں

اسلام آباد : وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے وفاقی وزراء کے قلمدان میں تبدیلی کی خبروں کو مستردکردیا اور کہا کسی وزیرکوتبدیل نہیں کیاجا رہا، تبدیلی کا اختیار وزیراعظم کے پاس ہے، وزیراس لیے وزیرہیں کیونکہ وزیراعظم ان سےمطمئن ہیں۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر وزراء کے قلمدان میں تبدیلی کی خبروں کو مسترد کرتے ہوئے کہا حکومتی وزراء کے قلمدان تبدیل کئے جانے کے حوالے سے خبروں میں کوئی صداقت نہیں، کوئی وزیر نہیں ہٹا رہے،تبدیلی کا اختیاروزیراعظم کے پاس ہے، میڈیا اس ضمن میں ذمہ داری کا مظاہرہ کرے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا آئی ایم ایف سے اچھے مذاکرات ہوئے ،اسد عمر جلد بیان دیں گے، اس وقت پاکستان اہم مرحلے سے گزر رہا ہے اور اس نوعیت کی قیاس آرائیوں سے ہیجان جنم لیتا ہے، جو ملک کے مفاد میں نہیں۔

وزیر اطلاعات نے اپنے بیان میں کہا کسی وزیرکوتبدیل نہیں کیاجا رہا، وزیراعظم نےپیغام بھیجامیڈیاپرغلط خبریں چل رہی ہیں، اس طرح کی خبریں تصدیق کے بغیر نہیں چلنی چاہئیں، غلط خبروں سے ملک اور میڈیا کا بھی نقصان ہوگا۔

آئندہ 2 دن میں معیشت سے متعلق بڑی خبریں آنے والی ہیں

ان کا کہنا تھا آئی ایم ایف سےبات حتمی مراحل میں ہوتوایسی خبریں آتی ہیں، وزیرخزانہ آئی ایم ایف سےمذاکرات کرکے آرہے ہیں، آئندہ 2 دن میں معیشت سے متعلق بڑی خبریں آنے والی ہیں۔

فوادچوہدری نے کہا وزراکی کارکردگی رپورٹس وزیراعظم آفس پہنچ چکی ہیں، وزیراس لیےوزیرہیں کیونکہ وزیراعظم ان سےمطمئن ہیں، کسی بھی ردوبدل کا اختیار وزیراعظم کے پاس ہے، ایسے کسی بھی فیصلے سے متعلق آگاہ کیا جائےگا۔

وزیراس لیےوزیرہیں کیونکہ وزیراعظم ان سےمطمئن ہیں

ان کا کہنا تھا آئی ایم ایف سےمذاکرات پراسدعمرتفصیلی آگاہ کریں گے، مضبوط معیشت کی طرف جا رہے ہیں، ایف اےٹی ایف معاملےپربھی مثبت پیشرفت سامنے آرہی ہے۔

یاد رہے یہ خبر سامنے آئی تھی کہ وزیراعظم عمران خان نے کارکردگی کی بنیاد پرپانچ وزراکےقلمدان تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے ، وزیرخزانہ اسدعمر،وزیرمملکت برائےداخلہ اورپٹرولیم کےوزراکے قلمدان تبدیل کیے جائیں گے۔

اسدعمر کو وزارت پیٹرولیم دینے اور شہر یارآفریدی کی جگہ اعجاز شاہ کو ذمہ داریاں دینے کا فیصلہ کیاگیا، جبکہ وزارت خزانہ کیلئے ٹیکنو کریٹ مشیر تعینات کئے جانے کا امکان ہے۔

مزید پڑھیں : وزیراعظم عمران خان کا اسد عمر کو وزارت خزانہ سے ہٹا کر وزارت پٹرولیم دینے کا فیصلہ

یاد رہے 29 مارچ کو وزیراعظم عمران خان نے وزارتوں کی کارکردگی کا سہ ماہی جائزہ لینے کا فیصلہ کرتے ہوئے رپورٹ طلب کی تھی، جس میں نومبر2018 سے اب تک کی کابینہ کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔

اس ضمن میں کابینہ میں شامل تمام وزیروں کو متعلقہ محکموں کی تیاری کے لیے دو ہفتے کا وقت دیا گیا تھا، وزارتوں کو رپورٹ پر بریفنگ کے لیے 30 منٹ کا وقت دیا جائے گا، جس کے بعد وزیر اعظم وزرا سے سوال جواب بھی کریں گے۔

خیال رہے کہ نئے پاکستان میں حکومت نے سو دن پورے ہونے پر کابینہ اراکین کی کارکردگی کا جائزہ لیا تھا، جس کے تحت تمام وزیروں نے رپورٹس وزیراعظم کو ارسال کی تھیں۔

رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ تمام وزرا کی کارکردگی مجموعی طور پر بہتر رہی جبکہ وفاقی وزیر مراد سعید اور شیخ رشید کے اقدامات قابل ذکر رہے تھے۔ دونوں وفاقی وزراء نے سو روزہ اہداف بر وقت مکمل کیے ، شیخ رشید نے وزارت میں 2 ارب ،مراد سعید نے 3 ارب سے زائد کی آمدن کا ریکارڈ بنایا تھا۔

سفارت کاری اور غیر ملکی رابطوں کے حوالے سے وفاقی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کی کارکردگی بھی شاندار رہی تھی جبکہ وزیرمملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی تجاوزات کے خلاف آپریشن اور سرکاری اراضی واگزار کرانے میں سرفہرست تھے۔

اسی طرح وفاقی وزیر آبی منصوبہ بندی فیصل واوڈا نے بھی مطلوبہ اہداف حاصل کر لئے تھے، 40 روزہ وزارت میں داسو ڈیم اور پانی چوری کی روک تھام کے لئے ہنگامی اقدامات کئے گئے اور ملک میں پہلی بار صوبوں کو ٹیلی میٹرز کی تنصیب پر راضی کیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں