site
stats
پاکستان

بیرونِ ملک جائیدادیں اوررقم واپس لانے کے لیے قوانین موجود نہیں: ایف بی آر

FBR

اسلام آباد: سپریم کورٹ میں پاکستانی شہریوں کے بیرونِ ملک اکاؤنٹس ازخود نوٹس کی سماعت ہوئی ‘ فیڈرل بورڈ آف ریوینیو نے رقم واپس منتقل کرنے میں بے بسی کا اظہار کردیا۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں ازخود نوٹس کی سماعت کے دوران ایف بی آر نے عدالت کو بتایا کہ پاناما اور دیگر لیکس میں آنے والے 444 افراد کے خلاف تحقیقات جاری ہیں‘ تاہم مختلف قانونی پیچیدگیوں کے سبب رقم کی واپسی اور احتساب کےمطلوبہ نتائج کی راہ میں قدغن حائل ہے۔

عدالت میں جمع کرائی گئی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بیرون ِ ملک معلومات کی فراہمی کا لیگل فریم ورک موجود نہیں ہیں‘ اس قدغن کو قانون میں ترمیم سے دور کیا جاسکتا ہے۔لیگل فریم ورک کی رکاوٹیں دور کرنےکے لیےٹریٹیز کر رہے ہیں۔

بتایا گیا کہ ایف بی آر کو یکم جولائی 2011 سےپہلےکی سرمایہ کاری پرتحقیقات کی اجازت نہیں۔ نان ریذیڈنٹ سے آمدن کے ذرائع نہیں پوچھ سکتے۔ ایف بی آر کی رپورٹ میں کہا گیا ہ کہ پیشہ ورانہ رویے اور خلوصِ نیت سے تحقیقات کررہے ہیں۔ قومی دولت کے ضیاع کا احساس ہے تاہم مختلف وجوہات کی بناپرمطلوبہ نتائج حاصل نہیں کرسکتے۔

ایف بی آر نے ان تک کی کارروائی کی تفصیلات فراہم کرتے ہوئے کہا کہ یواےای اتھارٹیزسے55پاکستانیوں کی جائیدادوں کی تفصیلات حاصل کرلیں ہیں۔29پاکستانی ایف بی آرمیں سالانہ گوشوارےجمع کرا رہےہیں‘ جن میں سے صرف پانچ نے متحدہ عرب امارات کی جائیدادیں گوشواروں میں ظاہر کی ہیں۔

پانامالیکس میں 444 پاکستانیوں کے نام آئےہیں جن میں سے 366 افراد کو نوٹس جاری کیے جاچکے ہیں ‘ 78 افراد کے موجودہ پتے نہیں ملے جس کے سبب انہیں تاحال نوٹس نہیں بھیجے گئے ہیں۔پانامالیکس کے61 نان فائلر میں سے 47 نے گوشوارے جمع کرادیئے جبکہ پیراڈائز لیکس کے 38 افراد میں سے 18 ٹیکس فائلر ہیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

loading...

Most Popular

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top