The news is by your side.

Advertisement

اسلام آباد میں ہندوﺅں کیلئے مندر کی تعمیر کا اقدام عدالت میں چیلنج

لاہور : اسلام آباد میں ہندوﺅں کیلئے مندر کی تعمیر کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا، جس میں کہا گیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں ہندو اپنی تعلیمات کا پرچار نہیں کر سکتے،مندر کی تعمیر کیلئے جگہ فراہم کرنے کا مراسلہ غیر آئینی قرار دے کر کالعدم کیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں اسلام آباد میں ہندوﺅں کیلئے مندر کی تعمیر رکوانے کیلئے درخواست دائر کردی گئی ، درخواست گزار محمد عاکف کی جانب سے دائر درخواست میں وزیر اعظم کے پرنسپل سیکرٹری، سی ڈی اے اور سیکرٹری داخلہ سمیت دیگر کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواست گزار نے موقف اختیار کیا ہے کہ پاکستان اسلامی جمہوریہ ہے جس میں اسلامی اصولوں سے ہٹ کر کوئی اقدام نہیں اٹھایا جا سکتا، کیپل ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے بائی لاز میں ہندوﺅں کے لئے مندر کی تعمیر کی کوئی شق موجود نہیں۔

درخواست میں کہا گیا الیکشن کمیشن کے ریکارڈ کے مطابق اسلام آباد میں صرف 178 ہندو آباد ہیں، اسلام آباد میں رہائش پذیر ہندوﺅں کی اپنی عبادگاہیں موجود ہیں، نئی عبادگاہ کا قیام غیر ضروری ہے۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں ہندو اپنی تعلیمات کا پرچار نہیں کر سکتے۔

درخواست گزار نے کہا مندر کی تعمیر کیلئے 100 ملین روپے کی لاگت سے زمین کی فراہمی شہریوں کے بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہو گی،استدعا ہے کہ اسلام آباد میں مندر کی تعمیر کیلئے جگہ فراہم کرنے کا مراسلہ غیر آئینی قرار دے کر کالعدم کیا جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں