The news is by your side.

Advertisement

جب مشہور مصور کے فن پاروں‌ کے رنگ اڑے

شہرۂ آفاق مصور ونسنٹ وان گو کے فن پاروں اور ان کے ہم عصر آرٹسٹوں کی تخلیقات سے سجا ہوا میوزیم نیدر لینڈز کے مشہور شہر ایمسٹرڈم میں واقع ہے۔

دنیائے مصوری کے اس عظیم تخلیق کار کی اس فن کے لیے خدمات کا اعتراف کرنے اور اس کے کام کو محفوظ کرنے کی غرض سے یہ میوزیم تعمیر کیا گیا تھا۔

اس عمارت کا افتتاح 2 جون 1973 کو ہوا۔ یہ عمارت خوب صورت اور منفرد طرزِ تعمیر کا نمونہ ہے۔
اس میوزیم میں وان گو کی مختلف پینٹنگز اور ڈرائنگ کا سب سے بڑا ذخیرہ موجود ہے۔ یہاں وان گو کے 800 فن پارے رکھے گئے ہیں۔

لگ بھگ دہائی قبل اس مصور کی چند تصاویر کا رنگ بدلنا شروع ہوا جس کے بعد ماہرین نے جائزہ لیا اور اس حوالے سے سائنس دانوں کی مدد لی گئی تو سامنے آیا کہ ونسنٹ وان گو کی چند تصاویر میں روشن زرد رنگ کی بھورے رنگ میں تبدیلی کی وجہ ایک پیچیدہ کیمیائی ری ایکشن ہے۔ رپورٹ کے مطابق ان تصاویر کو رنگت میں تبدیلی سے بچانے کے لیے انھیں الٹرا وائلٹ شعاعوں اور سورج کی روشنی سے دور رکھنا ہو گا۔

اس عظیم مصور کے شاہ کار فن پاروں کے اس کیمیائی ری ایکشن کو سمجھنے کے لیے ماہرین نے طاقت ور ایکس ریز سمیت کئی تجزیاتی آلات استعمال کیے تھے۔ 1853 میں‌ دنیا میں‌ آنکھ کھولنے والے وان گو نے 1890 میں‌
اپنی زندگی کا سفر تمام کیا۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں