ڈاکٹرعمران فاروق قتل کیس میں ایم کیوایم کے قائد الطاف حسین کے خلاف مقدمہ درج -
The news is by your side.

Advertisement

ڈاکٹرعمران فاروق قتل کیس میں ایم کیوایم کے قائد الطاف حسین کے خلاف مقدمہ درج

اسلام آباد: ایف آئی اے نے متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کے خلاف ڈاکٹرعمران فاروق قتل کیس کا مقدمہ درج کرلیا۔

ایف آئی اے نے ایم کیوایم کے مقتول رہنما کے قتل کے مقدمے میں الطاف حسین کے ہمراہ ان کے قریبی رفقاء محمد انوراور افتخار حسین کو بھی قتل کے مقدمے میں نامزد کیا گیا ہے۔

ایف آئی آرمیں موقف اختیارکیا گیا ہے کہ ڈاکٹرعمران فاروق کے قتل کی سازش پاکستان میں تیارہوئی تھی۔

عمران فاروق قتل کیس میں پہلے سے تین افراد زیرِحراست ہیں جن میں محسن، خالد شمیم اورمعظم علی شامل ہیں۔

ایف آئی آرمیں سیون اے ٹی اے (انسداد دہشت گردی ایکٹ شق 7) شامل کی گئی ہے۔

گزشتہ روزایم کیوایم کے مقتول رہنما کے قتل میں تین افراد زیرِحراست خالد شمیم، معظم علی اور محسن زیرحراست ہیں جن کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

ایف آئی اے کی جانب سے درج کئے جانے والے مقدمے میں قتل، اقدامِ قتل اور اعانتِ جرم کی دفعات شامل کی گئی ہیں۔

تینوں ملزمان سے مشترکہ تحقیقاتی کمیٹی جے آئی ٹی نے تفتیش کی تھی جبکہ اسکاٹ لینڈ یارڈ نے بھی مذکورہ بالا ملزمان سے سوالات کئے تھے۔

ایم کیو ایم کے مقتول رہنما کے قتل کے الزام میں گرفتار ملزم محسن نےجے آئی ٹی کے سامنے اعتراف کیا تھا کہ کاشف نامی اس کے ساتھی نے ڈاکٹرعمران فاروق پرچاقو کے وارکئے۔

جے آئی ٹی کے مطابق معظم علی نامی ملزم نے محسن اورکاشف نامی ملزمان کو لندن بھجوانے کا انتظام کیا تھا۔

تفتیش مکمل ہونے کے بعد وفاقی حکومت نے ڈاکٹرعمران فاروق کے قتل کا مقدمہ درج کرنے کا فیصلہ کیا جس کا اعلان چند روز قبل وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثارعلی خان نے کیا تھا۔

ڈاکٹرعمران فاروق متحدہ قومی موومنٹ کے بانی ارکان میں سے تھے جنہیں 16 ستمبر 2010 کو لندن میں ان کے اپارٹمنٹ کے نزدیک چاقوؤں کے پے درپے وارکرکے بے رحمی سےقتل کردیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں