The news is by your side.

Advertisement

سینیٹ اراکین نے آج بھارتی عزائم خاک میں ملا دیے، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد : وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ سینیٹ اراکین نے بل منظور کر کے بھارتی عزائم خاک میں ملا دیے،اب کوئی جواز نہیں کہ پاکستان گرے لسٹ میں رہے، پاکستان وائٹ لسٹ میں آجائے تو یہ سہرا سینیٹ کو بھی جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سینیٹ اجلاس میں کہا کہ متفقہ طورپر دونوں بل منظور کرنے پر ہاؤس کا شکریہ ادا کرتاہوں ، بھارت کافی عرصے سے پاکستان کو بلیک لسٹ میں دھکیلنے کی کوشش کررہاہے ، بھارت کے مقاصد ہیں کہ پاکستان کو مالی مشکلات سے دوچار رکھے۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ہماری کوشش ہے کہ پاکستان گرے لسٹ سے وائٹ لسٹ میں جائے، یہ بلز منظورکرکے آپ پاکستان کو وائٹ لسٹ میں لانے کے حصہ داربنے ہیں، پیپلزپارٹی،ن لیگ سمیت تمام جماعتوں کا شکریہ اداکرناچاہتاہوں، سینیٹ کے اراکین نے آج بھارت کے عزائم کو خاک میں ملادیا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہمارے100اختلافات ہوسکتے ہیں مگر مسئلہ کشمیر پر ہم سب ایک ہیں، چیئرمین کمیٹی جاوید عباسی ، مشاہد حسن ، شیری رحمان اور دیگر کا شکریہ ادا کرتا ہوں ۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومتیں عارضی ہیں وہاں بھی بیٹھ کر دیکھا یہاں بھی بیٹھ کر دیکھا، حکومت اور اپوزیشن دھوپ اور چھاؤ کی طرح ہیں ، سینیٹ کی جانب سے بل منظورہونےسےپاکستان کو ضرور فائدہ ہوگا۔

وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ جےیوآئی نے بل کی مخالفت کرکے تعصب دیا ہے ، جےیوآئی سے درخواست ہے ابھی وقت ہے ،قومی اسمبلی بھی جانا ہے، اس معاملے پر اپنا دل بڑا کریں۔

کلبھوشن کے حوالے سے شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ کلبھوشن یادیو کو جو سزا دی گئی اس میں کوئی تفریق نہیں ہوئی، کلبھوشن کو کوئی رعایت نہیں دی گئی اور نہ اسے راتوں رات فرار ہونے دیا جائے گا، بھارت کا خیال تھا آئی سی جے سے کلبھوشن کی سزا معطل کرالے گا، بھارت کو آئی سی جے سے شکست اور پاکستان کو کامیابی ہوئی۔

انھوں نے مزید کہا کہ آئی سی جے نے جنیوا کنونشن کے تحت قونصلر رسائی دینے کا کہا، بھارت کی خواہش تھی کہ پاکستان قونصلر رسائی ، اپیل کے فیصلے پر ہچکچاہٹ دکھائے، ہم نے بھارت کے اعتراضات کو دور کیا دو بار قونصلر رسائی دی ، بھارت نے شیشے لگنے اور گفتگو کی ریکارڈنگ پر اعتراض اٹھایا تو بھارت کو شیشے ہٹاکر اورگفتگو کی ریکارڈنگ کے بغیر رسائی دی ۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ بھارت دوبارہ چاہتا تھا کسی بہانےسے پاکستان پر اعتراض کرے، آئی سی جے کا فیصلہ واضح ہے اس معاملے پر کچھ چھپانے کی ضرورت ہی نہیں تھی، آج کل کچھ نہیں چھپتا جو چیز لکھی جاتی ہے وہ سوشل میڈیا کی نذرہوجاتی ہے۔

شاہ محمود قریشی نے مزید کہا کہ ایک سمری لکھی گئی ،وزیراعظم نے آئین کے تحت صدر کو آرڈیننس کیلئے بھجوائی، صدر نے گزٹ نوٹیفکیشن جاری کیا ، اس میں کوئی چھپانے کی بات نہیں تھی، ایسی کوئی چیز نہیں کی گئی جس سے پاکستان کو مشکلات کا سامنا ہو۔

ان کا کہنا تھا کہ سینیٹ نے یہ دو بل جس خلوص سے منظور کیا بھارت کو دوبارہ منہ کی کھانی پڑے گی ، پاکستان نے بل منظور کرلیا ہے اب کوئی جواز نہیں کہ گرے لسٹ میں رہے، پاکستان وائٹ لسٹ میں آجائے تو یہ سہرا سینیٹ کو بھی جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں