The news is by your side.

Advertisement

فارن فنڈنگ کیس، اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ چیلنج کرنے جارہے ہیں، فرخ حبیب

پی ٹی آئی رہنما فرخ حبیب نے کہا ہے کہ فارن فنڈنگ کیس کے حوالے سے اسلام آباد ہائیکورٹ کا فیصلہ انٹر کورٹ اپیل میں چیلنج کرنے جارہے ہیں۔

پی ٹی آئی رہنما فرخ حبیب نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن کمیشن میں صرف پی ٹی آئی نہیں بلکہ پیپلزپارٹی اور ن لیگ ممنوعہ فنڈنگ کیس چل رہے ہیں لیکن صرف پی ٹی آئی کیس میں حکم روزانہ کی بنیاد کا ہے تو پھرامتیازی سلوک نہیں ہونے دینگے۔

فرخ حبیب نے کہا کہ ن لیگ اور پیپلز پارٹی کیلئے کوئی الگ قانون نہیں ہے، یہ نہیں ہوسکتا کہ پی پی ،ن لیگ کیساتھ الگ اور پی ٹی آئی کیساتھ الگ سلوک ہو، دوسری جماعت کے کیسز گوسلو پر ہمارا کیس روزانہ سنا جائے۔

انہوں نے کہا کہ ہم کہتےہیں فیصلہ کریں ہمیں کوئی اعتراض نہیں، الیکشن کمیشن کی ذمے داری ہے وہ شفاف اور منصفانہ تحقیقات کرائے، مارچ 2018 میں پی ٹی آئی کی اسکروٹنی کمیٹی بنتی ہے، اس کےایک ماہ بعد ن لیگ اور پیپلزپارٹی کی اسکروٹنی کمیٹی بنتی ہے لیکن عدلیہ کا حکم تھا بغیر امتیازی سلوک کے تمام جماعتوں کی جانچ پڑتال کرنی ہے، بتایا جائے کہ پیپلز پارٹی اور ن لیگ کا حساب آگے کیوں نہیں بڑھ رہا جب کہ پی ٹی آئی کیس میں پہلے ایک ایک ماہ کی تاریخ ڈال دی جاتی تھی اور اب روزانہ سماعت ہورہی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ ہم اسلام آباد ہائیکورٹ میں ایک اور درخواست دائر کررہے ہیں، درخواست میں سپریم کورٹ کے2017 کے فیصلے کا حوالہ دیا جارہا ہے، تمام جماعتیں گوشوارے جمع کراتی ہیں انہیں بھی سب بتانا ہوگا، سپریم کورٹ کے 2017 کے فیصلے کے مطابق امتیازی سلوک نہیں چاہتے۔

فرخ حبیب نے کہا کہ وہ کہتے ہیں کہ اسرائیل، انڈیا سے فنڈنگ آگئی یہ سب آپ کا کردار ہے، اسامہ بن لادن سے پیسے لیکر تو حکومت آپ گراتےہیں جب کہ پی ٹی آئی پہلی جماعت ہے جس نے سیاسی فنڈ ریزنگ کے ایک ایک روپے کا حساب رکھا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف انٹرا کورٹ اپیل میں جا رہےہیں، آئین کےآرٹیکل 17،3پر مکمل عمل درآمدکراناہے، ہماری استدعا ہےکہ ان کیسز کا فیصلہ ایک ساتھ آنا چاہیے، پاکستانی قوم آئینی ادارے کی طرف دیکھ رہی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں