The news is by your side.

Advertisement

چیئرمین پی سی بی سے کم عہدے پر کام نہیں کروں گا، شعیب اختر

کراچی: قومی ٹیم کے سابق فاسٹ بولر شعیب اختر کا کہنا ہے کہ پی سی بی چیئرمین سے کم عہدے پر کام نہیں کروں گا۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام ’باؤنسر‘ میں گفتگو کرتے ہوئے سابق فاسٹ بولر شعیب اختر نے کہا کہ کرکٹ بورڈ میں اوسط درجے لوگ موجود ہیں جس کی وجہ سے ٹیم میں سپر اسٹار نہیں آتے ہیں۔

شعیب اختر نے کہا کہ ڈومیسٹک میں ہر کھلاڑی کو فی سیزن دو کروڑ روپے دینے کا خواہشمند ہوں۔

انہوں نے کہا کہ میں نے ہمیشہ اوپر رہنے کا خواب دیکھا ہے، اگر پالیسی کا حصہ نہیں ہوں تو کسی اور عہدے پر آنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے، پی سی بی چیئرمین سے کم کے عہدے پر کام نہیں کرسکتا۔

شعیب اختر نے کہا کہ عمران خان کی عزت کرتا ہوں، ان کے وژن پر صرف میں ہی عملدرآمد کروا سکتا ہوں، وہ آج بھی مجھے بچہ بھی ہی سمجھتے ہیں، انہیں فکر رہتی ہے کہ میں نے پیسے کمائے ہیں یا نہیں، جب بھی ان سے بات ہوتی ہے تو وہ خیریت دریافت کرتے ہیں۔

سابق اسپیڈ اسٹار نے کہا کہ پی سی بی کا سی ای او مجھ سے بہتر ہے، پی سی بی کو کارپوریشن کی طرح چلانا چاہیے، دنیا معیشت کے ذریعے آگے بڑھتی ہے، طے کرنا چاہیے کہ آپ کو مزید کیا کرنا ہے۔

ایک سوال کے جواب میں شعیب اختر نے کہا کہ آئندہ ٹی 20 ورلڈ کپ پلیٹ میں رکھا ہے اور گرین شرٹس کو جیتنا چاہیے کیونکہ وہ ایک طرح سے اپنے گھر میں ہی کھیل رہے ہیں۔

شعیب اختر نے کہا کہ پاکستان کے پاس اسپنر، آل راؤنڈر ہیں لیکن مڈل آرڈر میں ابھی بھی مسئلہ ہے، مجھے اب بھی یقین ہے کہ پاکستان یہ ورلڈ کپ جیت سکتا ہے اور بھارت کو ہرا سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں کرفیو توڑ کر نائٹ کلب نہیں ٹیکے لگوانے اسپتال جاتا تھا، 1994 میں میرے گھٹنے ختم ہوگئے تھے تکلیف کے نیزے پر بولنگ کرتا تھا۔

شعیب اختر نے کہا کہ پاکستان کرکٹ کو گزشتہ 20 سالوں میں تباہ کیا گیا، ایک تیز کھیلنے والے اور ایک آہستہ کھیلنے والے نے پاکستان کی کرکٹ تباہ کردی، میں اگر چیئرمین پی سی بی آیا تو کرکٹ بورڈ کو کمرشل بنیادوں پر چلاؤں گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں